اسمبلیوں سے استعفے،دو اراکین نے اے پی ڈی ایم کے فیصلے سے لاتعلقی کا اظہار کردیا

موجودہ حالات میں مستعفی ہونے کا کوئی فائدہ نہیں ،استعفے دباؤ کے ذریعے لئے گئے لہٰذا منظور نہ کئے جائیں، جمعیت علمائے اسلام کے صوبائی وزیر آغا فیصل داؤد اور جمعیت اہلحدیث کی خاتون رکن آمنہ خانم کا سپیکر سے تحریری درخواست میں مطالبہ

کوئٹہ۔آل پارٹیز ڈیموکریٹک موومنٹ کی جانب سے بلوچستان اسمبلی سے اراکین کے مستعفی ہونے کے موقع پر متحدہ مجلس عمل میں پھوٹ پڑ گئی ،ایم ایم اے کے دو اراکین نے اسپیکر کو ایک تحریری درخواست میں اے پی ڈی ایم کے فیصلوں سے لاتعلقی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان سے استعفے دباؤ کے ذریعے لئے گئے انہوں نے اسپیکر سے مطالبہ کیا کہ ان کے استعفے منظور نہ کئے جائیں۔جمعیت علمائے اسلام (ف) سے تعلق رکھنے والے صوبائی وزیر تعمیر ات و مواصلات آغا فیصل داؤد نے سپیکر کو اپنی درخواست میں لکھا ہے کہ انہوں نے اسمبلی سے استعفیٰ نہ دینے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ اب مستعفی ہونے کا کوئی فائدہ نہیں۔اگر استعفوں کا فیصلہ چند سال پہلے ہوتا تو کوئی معنی رکھتا تھا مگر اب یہ انگلی کٹا کر شہیدوں میں شریک ہونے کے مترادف ہے اوریہ فیصلہ اے پی ڈی ایم کے جسٹس وجیہہ الدین کو نامزد کرنے کے خلاف ہے ۔آغا فیصل داؤد نے اپنی درخواست میں مزید کہا ہے کہ بلوچستان میں ایم ایم اے کے وزراء کے علاقوں میں جو ترقیاتی کام ہوئے ہیں ان کی ماضی میں مثال نہیں ملتی ۔پانچ سال کی حکومت کرکے آخر میں استعفیٰ دینا خود غرضی اور عوام کو بے وقوف بنانے کے مترادف ہے ۔اسلام ہمیں مفاد کی سیاست کرنے کا حکم نہیں دیتا ان پانچ برسوں میں بلوچستان اسمبلی سے ایک بھی بل اسلام کیلئے پاس نہیں کرایا گیا اگر جمعیت کا مقصد صرف سیاست کرنا ہے تو وہ کسی بھی پلیٹ فارم سے ہوسکتی ہے ۔اپنی درخواست میں انہوں نے جمعیت علماء اسلام کوتنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ جمعیت کا میرے ساتھ ہمیشہ سوتیلا رویہ رہا ہے انہوں نے صوبائی وزیر مولانا عبدالواسع پر الزام لگاتے ہوئے کہا کہ ساری جماعت و وزراء کی پی ایس ڈی پی اسکیم وزیراعلیٰ سے منظور کروائی ماسوائے ان کی پی ایس ڈی پی کی اسکیم اور ان کے اس رویئے کا میرے تمام علاقے والوں کو صدمہ ہے ۔آغا فیصل داؤ نے مزید لکھا ہے کہ قلات اورتمام تحصیلوں سے جماعتی الیکشن جیتنے کے باوجود بھی جماعت ہمارے فیصلوں کو کالعدم قرار دیتی ہے اور بہت سی دیگر باتیں ہیں جو میں خود پریس کے سامنے جلد پیش کروں گا لہٰذا ان حالات میں وہ استعفیٰ نہیں دیں گے جبکہ جمعیت اہلحدیث سے تعلق رکھنے والی خاتون رکن صوبائی اسمبلی آمنہ خانم نے سپیکر کو بھیجی گئی ایک درخواست میں کہا ہے کہ وہ موجودہ حالات میں وہ استعفیٰ نہیں دینا چاہتی انہوں نے سپیکر جمال شاہ کاکڑ سے اپیل ہے کہ وہ ان کی غیر موجودگی میں ان کا استعفیٰ منظور نہ کریں ۔واضح رہے کہ استعفوں سے لاتعلقی کا اظہار کرنے والے آغا فیصل داؤ د اور آمنہ خانم دونوں منگل کے روز اے پی ڈی ایم کے رہنماؤںکی جانب سے صوبائی اسمبلی کے اسپیکر کو استعفے پیش کرنے کے موقع پر موجود نہیں تھے ۔آغا فیصل داؤد کا استعفیٰ سینیٹر کامران مرتضیٰ نے جمع کروایا تھا۔

Share

Leave a Reply