چیف جسٹس کے خلاف ریفرنس بھیجنے کا حق محفوظ رکھتا ہوں ۔حکومتی وکیل ڈاکٹر عبدالباسط

عدالت نے جو کیا وہ عدالت کی اپنی توہین اور مس کنڈکٹ ہے
وفاق کے وکیل کی نوٹس جاری ہونے کے بعد میڈیا سے گفتگو

اسلام آباد ‘ اٹھارہویں ترمیم کے خلاف دائر درخواستوں میں وفاق کے وکیل ڈاکٹر عبدالباسط نے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری پر تنقید کرتے ہوئے کہاہے کہ عدالت نے جو کیا وہ عدالت کی اپنی توہین اور مس کنڈکٹ ہے چیف جسٹس کے خلاف ریفرنس بھیجنے کا حق محفوظ رکھتا ہوں ۔ ان خیالات کا اظہارانہوںنے عدالت کی طرف سے شو کاز نوٹس جاری ہونے کے بعد سپریم کورٹ میں میڈیا سے گفتگو کے دوران کیا۔ انہوںنے کہاکہ جو بیان سلمان فاروقی نے دیا وہ درست اور قومی مفاد میں دیا ڈاکٹر عبدالباسط نے کہاکہ پیر کو ہونے والی عدالتی کارروائی کے شروع میں ہی ثابت ہو گیا کہ صرف چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اور جسٹس خلیل الرحمن رمدے نے کیس پر سوالات کئے اور کسی جج نے کوئی سوال نہیں پوچھا انہوںنے کہاکہ سلمان فاروقی نے بیان ایوان صدر اور وزیراعظم ہاؤس کے درمیان کسی قسم کی خلیج کا تاثر کم کرنے کیلئے دیا انہوں نے کہاکہ ایوان صدر یا وزیراعظم ہاؤس مقدمے کی پیروی نہیں کر رہے بلکہ وفاق مقدمے کی پیروی کر رہا ہے انہوں نے کہاکہ وفاق سے کون ان کو ہدایات دے رہا ہے نام بتانے بارے ایسی غلطی وہ دوبارہ نہیں کریں گے جیسے کہ پیر کو صبح عدالت عظمیٰ میں کارروائی کے دوران کیا۔ انہوں نے کہاکہ انہیں ایوان صدر کو وزیراعظم سے لڑانے اور خلیج کو وسیع کرنے کی سازش معلو م ہوتی ہے جو کہ سیاسی حربہ ہے انہوں نے الزام لگایا کہ پیر کو مقدمے کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے یہی سیاسی حربہ استعمال کیا جو عام طور پر ہورہا ہے اور یہ ثابت کرنے کی کوشش کی کہ مقدمے کی تیاری اور مجھے ہدایات ایوان صدر سے مل رہی ہیں اور وفاق کے دوسرے ادارے اس میں شامل نہیں ہیں یہ تاثر غلط ہے اور اگر یہ تاثر زائل نہ ہوا تو یہ عوامی مفاد کے بہت خلاف ہے انہوں نے کہاکہ وہ ببانگ دہل کہتے ہیں کہ اس میں صدر زرداری کے یا ایوان صدر کا کوئی کردار نہیں ہیے وہ نہ مقدمے کی پیروی کر رہے ہیں اورنہ ہی انہوں نے وکیل نامزد کیا ہے انہوں نے کہاکہ میڈیا بھی اس میں کردار ادا کر رہاہے کہ ایوان صدر اور وزیراعظم کے درمیان خلیج پیدا ہو گئی ہے اور ایوان صدر ہی مقدمے کی پیروی کر رہا ہے یہ تاثر غلط ہے انہوں نے کہاکہ میں نے چیف جسٹس سے کہاکہ آپ نے مجھے نوٹس تو جاری کر دیا ہے اور مجھے کہاہے کہ کیوں نہ غلط بیانی پر آپ کا لائیسنس کینسل کر دیا جائے میں نے ان سے کہاکہ دیکھیں آپ نے آج وہ حرکت کی ہے جس کے لئے مجھے ریفرنس دینے کا بھی حق حاصل ہے یہ بات کہ ایوان صدر سے یہ سب کچھ ہو رہاہے اور وزیراعظم وفاق کا کام نہیں کر رہا ہے یہ عدالتی مس کنڈکٹ ہے میں اپنا حق محفوظ رکھتا ہوں اورمجھ پر فرض ہے کہ میں صدر کو آگاہ کروں کہ معاملہ کیسے ہوا انہوں نے کہاکہ مجھے مقدمہ کی پیروی سے علیحدہ کرنے میں یہ بات درپیش ہے کہ کوئی موثر وکیل اس کیس میں پیش نہ ہو انہوں نے کہاکہ جو پیر کو عدالت نے کیا وہ عدالت کی اپنی توہین ہے اور مس کنڈکٹ ہے کہ انہوں نے جان بوجھ کر سوالات کر کے ثابت کرنے کی کوشش کی کہ مقدمہ کو ایوان صدر لڑ رہا ہے۔

Share

1 Comment to "چیف جسٹس کے خلاف ریفرنس بھیجنے کا حق محفوظ رکھتا ہوں ۔حکومتی وکیل ڈاکٹر عبدالباسط"

  1. شاہد مسعود احمد's Gravatar شاہد مسعود احمد
    May 31, 2010 - 1:10 pm | Permalink

    سستی شہرت بھی ایک ایسا مرض ہے کہ لوگ شاہ سے زیادہ شا ہ کے وفادار بن جاتے ہیں پھر وہ شاہ کو ھی اپنا دیوتا بھکوان اور خدا سمجھ کر زلت کی آخری منزل پر چلے جاتے ہیں ان کو کون سمجھا سکتا ہے البتہ ان سے بہت سے لوگ عبرت حاصل کریں گئے

Leave a Reply