Urdu News

Urdu News…The 3rd Largest Online Urdu Newspaper

Urdu News header image 4

Entries from June 30th, 2010

پاکستان کسٹم نے نیٹو کے خلاف پاکستان میں 4 مختلف ایف آئی آر درج کر لیں

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

کراچی ، پشاور ‘ پاکستان کسٹم کی جانب سے افغانستان میں تعینات اتحادی افواج (نیٹو) کے خلاف پاکستان میں چار مختلف ایف آئی آر درج کر لی گئی ہیں۔ پشاور اور کراچی میں محکمہ کسٹم نے افغانستان میں تعینات اتحادی فوج کے خلاف چار مختلف ایف آئی آر درج کی ہیں۔ پہلی دو ایف آئی آر 8 اور 21 اپریل کو افغانستان کی مس لنرپراڈگٹ کمپنی اور ایساف کے خلاف پشاور جبکہ دوسری دو ایف آئی آر کراچی میں پی ایس کو اور ایساف کے خلاف 24 مئی کو درج کی گئی ہیں۔ 8 اپریل کو پشاور میں کسٹم انٹیلی جنس نے ایک اطلاع پر چھاپا مارا جہاں شراب سے بھرا کنٹینر فروخت ہو چکا تھا ۔ تحقیقات کا آغاز ہوا تو پتہ چلا کہ مس لونر نے جنوری 2008ء سے 2010ء تک ایساف کے نام پر شراب سے بھرے 51 کنٹینرز منگوا چکی ہے ۔ اسی دوران کراچی میں ہی شراب سے بھرے 3 کنٹینر برآمد کر لیے گئے ان کنٹینروں میں بھی مشروبات ظاہر کیے گئے تھے۔25مئی کو پی ایس کو انٹرنیشنل کے وکیل کی جانب سے سسٹم حکام کو لکھے گئے خط میں یہ موقف اختیار کیا گیا کہ افغانی وزارت خزانہ نے ان کو ہدایت دی تھی کہ وہ شراب کی جگہ مشروبات کا لفظ استعمال کریں اور 2003ء سے یہی طریقہ اختیار کیے ہوئے ہیں اور کبھی دشواری کا سامنا نہیں کرنا پڑا کمپنی اپنے فعل کو صحیح سمجھتی ہے ۔ پی ایس کو انٹرنیشنل کے وکیل نے مطالبہ کیا ہے کہ ضبط کیے گئے تین کنٹینروں کو فوری طور پر چھوڑا جائے اور کراچی میں کسٹم کی جانب سے درج کیے گئے کیس کو بھی واپس لیا جائے اس خط سے قبل 22 مئی 2010ء کو ایساف ہیڈ آف کنڈیکٹ اینڈ کسٹم لیفٹیننٹ کرنل نے تسلیم کیا کہ تینوں کنٹینر ایساف کے لیے لائے جا رہے تھے ۔ اطلاعات کے مطابق لیفٹیننٹ کرنل کو مبینہ طور پر ملوث ہونے کے شبہ میںا ن کے عہدے سے ہٹایا گیا ہے ۔

Tags: ·

قومی اسمبلی نے وفاقی دارالحکومت میں ہائی کورٹ کے قیام کیلئے قانون وضع کرنے کا بل متفقہ طور پر منظور کر لیا

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

اسلام آباد ‘ قومی اسمبلی نے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں ہائی کورٹ کے قیام کیلئے قانون وضع کرنے کا بل متفقہ طور پر منظور کر لیا۔ بل میں سینٹ کی سفارشات کو بھی شامل کر لیا گیا مسلم لیگ (ن) نے بل کے حوالے سے اپنے اعتراضات حکومت کی درخواست پر واپس لے لئے ہیں بدھ کے روز قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران وزیر قانون ، انصاف و پارلیمانی امور ڈاکٹر بابر اعوان نے دارالحکومت اسلام آباد کے علاقے میں ہائی کورٹ کے قیام کیلئے قانون وضع کرنے کا بل منظور کرنے کیلئے پیش کیا اس دوران مسلم لیگ ن کی ایم این اے انوشہ رحمن نے ان کی اس تحریک کی مخالفت کی اور نکتہ اعتراض پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہاکہ ہمیں اس بل پر اختلاف نہیں بلکہ اس طریقہ کار پر اختلاف ہے جس کے مطابق وزیر قانون اس بل کو پیش کر رہے ہیں انہوں نے کہاکہ پہلے اس بل کو جلد بازی میں منظور کیاگیا سینٹ نے اس حوالے سے اپنی تجاویز دی ہیں ان تجاویز کے بارے میں کیاکیا جارہاہے انہوں نے کہا کہ ہمارا مطالبہ ہے کہ اس بل کو قائمہ کمیٹی کے سپرد کیا جائے بجٹ میں اس حوالے سے کوئی رقم بھی نہیں رکھی گئی جس پر وزیر قانون نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اس معاملے پر ساری سیاسی جماعتوں نے اتفاق کیا تھا اس موقع پر مسلم لیگ (ن) کے چیف وہیپ شیخ آفتاب اور ایم این اے تنویر رانا نے موقف اختیار کیا کہ پی پی پی کے چیف وہیپ سید خورشید شاہ نے اتفاق کہا تھا کہ اس بل کو آج کے ایجنڈے میں شامل نہیں کیا جائے گا اس کے بعد بھی یہ بل اچانک لایا گیا ہے جس پر اعتراض ہو گا انہوں نے کہاکہ ہمارا مطالبہ ہے آج کے روز اس بل کو موخر کیا جائے اور اس حوالے سے سینٹ کی نظر ثانی کی تجاویز کو زیر غور لا کر اس کا فیصلہ کیا جائے اس موقع پر وزیراعظم نے کہاکہ اس معاملے پر اتفاق رائے کرنے کیلئے ایوان کا اجلاس میں وقفہ کیا جائے تاکہ اس پر اتفاق رائے حاصل کیا جائے جس پر سپیکر قومی اسمبلی فہمیدہ مرزا نے اجلاس نماز مغرب کے لئے وقفہ کر دیا وقفہ کے بعد دوبارہ اجلاس شروع ہوا تو وزیر قانون بابر اعوان نے ایوان کو بتایا کہ ہم نے اپوزیشن کا نکتہ سنا ہے انہیں اس بل پر اعتراض نہیں ہے۔ اس موقع پر رانا تنویر نے کہاکہ حکومت ایک جانب جمہوریت کی چمپیئن بننے کی کوشش کرتی ہے تو دوسری جانب اسلام آباد میں ہائی کورٹ کے قیام کے حوالے سے اپوزیشن کا موقف نہ سننا ایک برا طریقہ ہے انہوں نے کہاکہ اگر آئندہ کی ضمانت دے رہے ہیں تو ٹھیک ہے دریں اثناء سپیکر نے بل کی شق وار منظوری کیلئے رائے شماری کرائی جس پر اراکین پارلیمنٹ نے اس کو منظور کر لیا۔ بل کی منظوری کے بعد وفاقی وزیر قانون ڈاکٹر بابر اعوان نے کہاکہ عدالت اعظمیٰ میں اٹھارہویں ترمیم سے متعلق کیسز پر فیصلہ کے بعد جوڈیشل کمیشن کے ذریعے اسلام آباد ہائی کورٹ میں ججز کی تقرری ہو سکے گی کسی بھی مقدمہ کی دو سال تک سماعت مکمل نہ ہونے پر اس عرصہ تک کسی اپیل کے نہ سنے جانے پر زیر حراست شخص کی ضمانت پر رہائی کیلئے ضابطہ فوجداری میں ترمیم کافیصلہ کیاگیا ہے ا حتساب کمیشن سے متعلق بل بھی جلد اسمبلی میں پیش کر دیا جائے گا قومی اسمبلی میں اسلام آباد ہائی کورٹ کے قیام کے بل کی منظوری کے بعد ڈاکٹر بابراعوان نے ایوان کو مبارک باد دی انہوں نے کہاکہ این این او کی وجہ سے اسلام آباد میں ہائی کورٹ ختم ہونے سے چھبیس ہزار مقدمات زیر التواء تھے بل کو اتفاق رائے سے منظور کیا گیا جو وفاق پر اعتماد مضبوط ہو گا اسلام آباد ہائی کورٹ میں جوڈیشل کمیشن کے ذریعے فاٹا اور چاروں صوبوں سے ججز کی تقرری ہو گی اہم پیش رفت ہے سارے پاکستان کو ریلیف ملے گا سستا فوری انصاف فراہم کرنے کیلئے اسلام آباد کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جوڈیشل کمیشن کے ذریعے ججز کی تقرری ہو گی سوئس عدالتوں کی سمری منظوری کے مرحلے میں ہے پہلی احتساب عدالت قائم ہو چکی ہیں احتساب کے حوالے سے بھی مل جل کر اسمبلی کے سامنے آئے گا

Tags: ·

پاکستان کو ملا عمر بارے معلوم ہے کہ وہ کہاں ہے مگر بتا نہیں رہے۔ ۔ ۔ رچرڈ ہالبروک

June 30th, 2010 · No Comments · دنیا کی خبریں, پاکستان

پاکستان حقانی گروپ کو نشانہ بنانے سے گریزاں ہے،گروپ کو قبائلی علاقوں میں محفوظ ٹھکانے دئیے گئے ہیں
امریکہ کے خصوصی نمائندے برائے پاکستان افغانستان کے تاثرات

اسلام آباد ‘ امریکہ کے خصوصی نمائندے برائے پاکستان رچرڈ ہالبروک نے الزام لگایا ہے کہ پاکستانی حکام کو طالبان کے قائد ملا عمر کے بارے میں معلوم ہے کہ وہ کہاں ہے تاہم وہ اس بارے میں کچھ بتا نہیں رہے ہیں۔ایک نجی ٹیلی ویژن نے سینٹ کی دفاعی کمیٹی کے ارکان کے دورہ امریکہ کے حوالے سے تیار کی جانے والی رپورٹ کے حوالے سے یہ بات بتائی ہے ۔رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ سینیٹر جاوید اشرف قاضی کی سر براہی میں امریکہ کا دورہ کر نے والے وفد کو امریکی حکام بالخصوص سی آئی اے کے عہدیداران نے واضع طور پر بتایا ہے کہ سی آئی اے اور آئی ایس آئی کے درمیان عدم اعتماد پایا جاتا ہے۔ امریکی سی آئی اے کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ میں افغانستان میں امریکی فوج سے برسرپیکار حقانی گروپ کو نشانہ بنانے سے گریزاں ہے اس گروپ کو قبائلی علاقوں میں محفوظ ٹھکانے دئیے ہوئے ہیں۔نجی ٹیلی ویژن کے مطابق نائن الیون کے بعد امریکی سی آئی اے اور ایف بی آئی القاعدہ اور طالبان ارکان کی گرفتاری کے لئے پاکستان کے مختلف شہروںمیں کاروائیاں کرتی ان آپریشنز میں امریکی ایف بی آئی جائے وقوعہ سے تبوت اکھٹے کرنے اور پاکستانی فوج سی آئی اے اور ایف بی آئی کو کسی مشکل سے بچانے کے لئے ان کی معاونت کرتی ۔ ان آپریشنز میں سی آئی اے مرکزی کردار ادا کرتی جبکہ پاکستان کی فوج صرف سی آئی اے اہلکاروں کی حفاظت کرتی تھی امریکی سی آئی اے نے القاعدہ کے مبینہ دہشت گرد ابو زبیدہ کی گرفتاری کے لئے پاک فوج اور ایف بی آئی کے ہمراہ رات گئے فیصل آباد میں مارچ 2002ء میں ایک آپریشن کیا تھا جو ایسے ہی کئی اپریشن میں سے ایک تھا امریکی حکام کے مطابق اس آپریشن میں امریکی سی گئی اے کے اہلکاروں نے پاکستانی کپڑے پہن رکھے تھے جبکہ ایف بی آئی اور پاک فوج سی آئی اے کی معاونت میں پیش پیش تھی سی آئی اے کی نشاندہی پر فیصل آباد کے ایک گھر پر چھاپا مارا گیا جہاں سے پاک فوج کو مزاحمت کا سامناکر نا پڑا تاہم بعد میں ایوزیبدہ کو موقع سے زخمی حالت میں گرفتار کر لیا گیا جسے بعد میں گوانتا ناموبے کی جیل میں رکھ کر اس پر مقدمہ چلایا گیا ۔ جس میں اس نے اپنے اکثر منصوبوں کا اقبال جرم کیا ۔ پاکستان کی موجودہ دور حکومت میں بھی امریکی سی آئی اے کے درمیان تعاون جاری ہے جس کی نگرانی براہ راست آئی ایس آئی کے موجودہ سربراہ جنرل احمد شجاع پاشا کر رہے ہیں تاہم پاکستان کے دوروں کے موقع پر سی آئی آے کے سربراہ کی آرمی چیف جنرل اشفاق پرویز کیانی سے خصوصی ملاقات ہوتی ہے ۔ افغانستان کی صورت حال مزید برتر ہوتی جا رہی ہے اور امریکی انتظامیہ اسے حل کرنے کے لئے اپنا زیادہ تر انحصار سی آئی اے پر ہی کر رہی ہے۔ پاکستان اور امریکہ کے درمیان تعاون کا بییادی نقطہ تو دہشت گردی ہی ہے لیکن امریکی سی آئی اے پاکستان کے اس تعاون سے تا حال مطمئن نہیں ہے ۔ آئی ایس آئی کے سابق براہ لیفٹیننٹ جنرل(ر)جاوید اشرف قاضی کا حالیہ دورہ امریکہ میں اس بات کا ثبوت ملتا ہے ۔ جاوید اشرف قاضی نگرانی میں ایک رپورت تیار کی گئی۔ رپورٹ کے مطابق امریکی سی آئی اے کے ایک اعلیٰ افسر کے ساتھ ملاقات سے قبل جاوید اشرف قاصی نے امریکی کانگرس ارمز سروسز کمیٹی کے چیئرمین جان ٹائرنی سے ملاقات کی جس مین امریکی اہلکار نے انکشاف کیا کہ اس وقت سی آئی اے اور آئی ایس آئی کے درمیان عدم اعتماد پایا جاتا ہے ۔ جس پر جاوید اشرف قاضی نے کہا کہ پاکستان میں سب کو یہی معلوم ہے کہ دونوں ادارے مل کر کام کر رہے ہیں اور اگر ایسا پیغام پاکستان میں گیا تو اس کا منفی اثر ہو گا دراصل امریکی سی آئی اے کا دعویٰ ہے کہ پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ میں افغانستان میں امریکی فوج سے برسرپیکار طالبان کا حقانی گروپ کو نشانہ بنانے سے گریزاں ہے اور اسے قبائلی علاقوں میں محفوظ ٹھکانے دئے ہوئے ہیں جبکہ پاکستانی حکام کا کہنا ہے کہ سی آئی اے ان عناصر کے خلاف کاروائی نہیں کرتی جو پاکستان میں حملے کرتے ہیں اور نہ ہی سی آئی اے پاکستان کے ساتھ انٹلی جنٹس معلومات کا مناسب تبادلہ کرتی ہے ۔ پاکستان سینٹ کی دفاعی کمیٹی کی رپورٹ کے مطابق امریکی خصوصی ایلچی رچرڈہالبروک نے بلاواسطہ طور پر آئی ایس آئی پر الزام عائد کیا کہ پاکستانی حکام کو معلوم ہے کہ ملا عمر کہاں ہیں مگر وہ اس بارے میں کچھ بتا نہیں رہے۔

Tags: ·

صدر تیاری کر لیں مسلم لیگ (ن) اصل اپوزیشن بننے جا رہی ہے ۔ ۔ ۔ عمران خان

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

ڈرون حملوں کے خلاف سپریم کورٹ میں رٹ دائر کر دی
پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین کا پریس کانفرنس سے خطاب
اسلام آباد ‘ پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین عمران خان نے کہا ہے کہ صدر آصف علی زرداری تیاری کر لیں18 ویں ترمیم کی منظوری کے بعد مسلم لیگ (ن) اصل اپوزیشن کا کردار ادا کرنے جا رہی ہے ۔ ڈرون حملے ملکی سالمیت اور بین الاقوامی قوانین کی کھلی جن کے خلاف سپریم کورٹ میں رٹ دائر کر دی گئی ہے ۔ ڈرون حملوں سے دہشت گردی میں کمی کی بجائے اضافہ ہوا ہے ۔ وکلاء پیسے لیں لیکن ساتھ سپریم کورٹ کا دیں۔ وہ آج تحریک انصاف سیکریٹریٹ میں پریس کانفرنس کر رہے تھے ۔ انھوں نے کہا کہ پارلیمنٹ کی قراردادوں کے باوجود پاکستان میں امریکی ڈرون حملے بند نہیں ہوئے جس کے خلاف آخری حربے کے طور پر سپریم کورٹ گئے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ حکومت اور اپوزیشن ملے ہوئے ہیں اور ڈرون حملے حکومت کو بتا کر کیے جاتے ہیں۔ عمران خان نے بتایا کہ اب تک 107 ڈرون حملے کیے گئے ہیں جن میں 1153 بے قصور جبکہ صرف 10 دہشت گرد مارے گئے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ حملے کوئی کر رہا ہے جبکہ قیمت ہم ادا کر رہے ہیں۔ ڈرون حملوں سے قبائلی علاقوں کی معیشت تباہ ہو چکی ہے ۔ پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جس پر اس کا اتحادی بم برساتا ہے ۔عمران خان نے کہا کہ شہریوں کے حقوق کا تحفظ سپریم کورٹ کی ذمہ داری ہے اور اگر سپریم کورٹ ڈرون حملوں کے خلاف فیصلہ دے گی تو اس کی مقبولیت میں اضافہ ہو گا۔ ایک سوال کے جواب میں عمران خان نے کہا کہ صدر آصف علی زرداری کو تیاری کر لینی چاہیے کیونکہ میاں نواز شریف اصل اپوزیشن کی طرف آ رہے ہیں کیونکہ 18 ویں ترمیم میں تیسری بار وزیر اعظم بننے کی شرط ختم ہو چکی ہے انھوں نے کہا کہ نواز شریف اپنے مفاد کے لیے ہمیشہ دوسروں کو استعمال کرتے ہیں۔2008ء کے انتخابات میں بھی ساتھ اے پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم پر انتخابات کا بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ کیا لیکن بعد ازاں واشنگٹن سے فون کال آنے پر انتخابات میں حصہ لے لیا ۔ اس موقع پر شوکت صدیقی ایڈووکیٹ نے بتایا کہ سپریم کورٹ میں ڈرون حملوں کے خلاف دائر درخواست میں وفاقی سیکرٹری داخلہ ، وفاقی سیکرٹری خارجہ اور صوبوں کو فریق بنایا گیا ہے

Tags: ·

سینئر صحافی شکیل احمد ترابی کے بیٹے حسن شرجیل کے اغواء کے حوالے سے نیا انکشاف

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

بچہ گل رازق کے قبضے میں ہے ،سخی افغانی نامی شخص کی جانب سے خط موصول
اسلام آباد‘ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس افتخار محمد چوہدری کی جانب سے از خود نوٹس کی کئی سماعتوں کے بعد سینئر صحافی شکیل احمد ترابی کے بیٹے کے اغواء کے حوالے سے نیا انکشاف سامنے آیا ہے ۔30جون کو سخی افغانی نامی شخص کی جانب سے شکیل احمد ترابی کو ایک خط موصول ہوا ہے ، جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ان کا بیٹا حسن شرجیل خیریت سے ہے اور گل رازق نامی شخص کے قبضے میں ہے۔سخی افغانی نامی اس شخص نے خط میں دعویٰ کیا ہے کہ وہ گل رازق نامی شخص کا ڈرائیور ہے اور اس نے حسن شرجیل کو 5 جنوری2010ء کو گاڑی نمبر RIT-3156 میں اسلام آباد سے اغواء کیا تھا۔ وہ افغانستان کے صوبہ خوست کے رہنے والے ہیں اور اس وقت شمالی وزیرستان کے علاقے میران شاہ میں رہائش پذیر ہیں۔سخی افغانی نامی شخص نے خط میں یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ وہ تاوان کے لئے بچوں کو اغواء کرتے ہیں اور اس وقت حسن شرجیل سمیت پنجاب،سندھ اور دیگر صوبوں سے کئی بچے ان کے قبضے میں ہیں اور بچے کی بازیابی کے لئے گل رازق کا پیچھا کریں۔ خط میں دو ٹیلی فون نمبر بھی درج کئے گئے ہیں جن میں سے ایک ٹیلی فون نمبر بنوں کا ہے جس پر کئی بار کال کی گئی لیکن رابطہ نہیں ہو سکا۔ جبکہ دوسرے نمبر پر کال کی گئی تو یہاں ایک شخص نے فون اٹھایا جو پشتوبول رہا تھا اس سے کہا گیا کہ کیا وہ انگریزی سمجھتا ہے؟ تو اس نے کوئی جواب نہ دیا تو پشتو ترجمان کے ذریعے اس سے دوبارہ بات کی گئی جس پر کال سننے والے نے بتایا کہ’’ وہ گل محمد بول رہا ہے ‘‘ اور افغان صوبے لوگر کا رہنے والا ہے جب دوسری مرتبہ کال کی گئی تو اس نے بتایا کہ وہ صوبہ قندھار سے بات کر رہا ہے اور وہ سخی افغانی یا گل رازق نامی کسی شخص کو نہیں جانتا، آپ کو کسی نے ہمارا غلط نمبر دے دیا ہے۔ واضح رہے کہ حسن شرجیل کو اغواء ہوئے5 ماہ26 دن گزر چکے ہیں۔ جبکہ چیف جسٹس ،جسٹس افتخار محمد چوہدری نے حسن شرجیل کے اغواء کے خلاف ازخود نوٹس لے رکھا ہے جس کی سماعت2جولائی2010 کو پھر ہو نی ہے جس میں پولیس کو سخت احکامات جاری کئے گئے ہیں کہ وہ 2 جولائی کو حسن شرجیل کو ہر صورت عدالت میں پیش کریں۔

Tags: ·

ایساف کے نام پر جعلی کاغذات پر آنے والے 40 کنٹینرز پاکستان میں غائب ہوئے۔ ۔ ۔ چیئر مین ایف بی آر

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

کنٹینر افغان کمپنی کے تھے جس کا ٹھیکہ سرے سے ایساف کے ساتھ نہیں تھا
سکینڈل میں ملوث کمپنی کے 4 اور کسٹمز کے 3 اہلکاروں کو گرفتار کر کے شامل تفتیش کر لیا ہے
نیٹو اور ایساف کے کنٹینرز سے کسی قسم کی ڈیوٹی وصول نہیں کرتے ہیں نہ ہی ان کی عام طور پر سکیننگ کرتے ہیں
جنرل کسٹمز آرڈر میں ترامیم کر نے کا فیصلہ کیا ہے
ایف بی آر کے چیئر مین اور ممبر کسٹمز کی مشترکہ پریس کانفرنس

اسلام آباد ‘ فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے چیئر مین سہیل احمد نے اس امر کی تصدیق کی ہے کہ ایساف کے نام پر لائے جانے والے 40 کے قریب کنٹینرز پاکستان میں غائب ہوئے ہیں اس سکینڈل میں ملوث کسٹمز کے 3 اہلکاروں اور مذکورہ کنٹینرز کمپنی کے 4افراد کو گرفتار کر کے تفتیش کی جا رہی ہے۔ حکومت پاکستان ایساف اور نیٹو کے کنٹینرز پر کسی قسم کی ڈیوٹی وصول نہیں کرتی۔ ایف بی آر کے ملازمین کی جانب سے ہڑتال کے باعث محصولات کی وصولی کا کام سخت متاثر ہوا ہے۔ یہ بات انہوں نے یہاں ایف بی آر ہاؤس میں ممبر کسٹمز منیر احمد کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ چیئر مین ایف بی آر نے کہا کہ گزشتہ سوا دو سالوں کے دوران ایساف کے 14 ہزار کے قریب کنٹینرز پاکستان پہنچے ہیں اگر ان میں سے 11ہزار غائب ہو جائیں تو باقی کیا رہ جاتا ہے اس لئے کنٹینرز غائب ہو نے کے حوالے سے اخبارات میں آنے والی تعداد درست نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ابتدائی تحقیقات کے مطابق 40 کے قریب جبکہ باقی دو دنوں میں 1345 ارب روپے تک وصول کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ دیگر سر کاری ملازمین کی طرح ایف بی آر کے ملازمین کی تنخواہوں میں 50 فیصد اضافہ نہ کر نے پر ایف بی آر کے ملازمین ہڑتال پر چلے گئے جس سے محصولات وصول کر نے کا عمل متاثر ہوا۔ انہوں نے کہا کہ اس دوران چینی پر سیلز ٹیکس کی شرح کم ہو نے سے 22 ارب روپے کا نقصان ،پی ایس ڈی پی کے کم ہو نے سے 15 ارب روپے،ایف بی آر کے موثر انتظامی اقدامات نہ ہو نے سے 10 سے15 ارب روپے کا نقصان ہوا جس سے محصولات کا ہدف حاصل کر نے میں ناکامی رہی۔ اس موقع پر ممبر کسٹمز منیر احمد نے کہا کہ ایساف اور نیٹو کے لئے باہر سے آنے والے کنٹینرز پر سامان پاکستان میں چیک نہیں کیا جاتا اور صرف پورٹ قاسم پر این ایل سی شک کی بنیاد پر اسے چیک کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسٹمز جنرل آرڈر کے ذریعے آج تک پاکستان نے ایساف اور نیٹو کے کنٹینرز کو راہ داری کے لئے کسی قسم کی ایک روپے کی ڈیوٹی وصول نہیں کی بلکہ یہ سروس مفت دی جا رہی ہے اس لئے کنٹینرز غائب ہو نے سے اڑھائی سو ارب روپے کے محصولات کا نقصان ہو نے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ انہوں نے کہا کہ ان کنٹینرز کی صرف ایساف میں شامل ممالک کے نمائندوں کی تصدیق کے بعد ان کا سامان کسٹمز حکام چھوڑ دیتے ہیں جبکہ لاز پروڈکٹس کے حوالے سے افغان ایساف کے کنٹینرز پاکستان میں غائب ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پشاور میں کچھ کنٹینرز خالی ہوتے ہوئے دیکھے گئے جس کے بعد قانون نافذ کر نے والے اداروں نے اس موقع پر پہنچ کر تحقیقات شروع کی تو پتہ چلا کہ افغانستان کی لاز پروڈکٹس کمیٹی کے کنٹینرز ہیں جن پر ایساف کی مہر لگی ہوئی تھی اور ان کنٹینرز پر سافٹ ڈرنکس ڈکلیئر کیا گیا تھا جب کہ اس کو چیک کر نے پر پتہ چلا کہ ممنوعہ اشیاء تھیں ۔ انہوں نے کہا کہ جب کنٹینرز کے حوالے سے ایساف کے ساتھ رابطہ کیا گیا تو انہوں نے واضع الفاظ میں کہا کہ اس کمپنی کے ساتھ ہمارا کوئی ٹھیکہ نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس معاملے کی تفتیش کا دائرہ کار بڑھانے کا فیصلہ کیا اور اس کے لئے ایک فیکٹ فائنڈنگ کمپنی بھی قائم کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ میں اصلاحات کے سلسلے میں اس بات پر افغان حکام نے اتفاق کیا ہے کہ اس امر کا جائزہ لیا جائے گا کہ اس معاہدے سے پاکستانی معیشت پر کچھ اثرات مرتب ہوں گے۔ چیئر مین ایف بی آر نے کہا کہ افغان سفارت خانے نے تصدیق کی ہے کہ یہ ان کے ملک کی کمپنی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج ہم نے این ایل سی ،وزارت تجارت اور وزارت دفاع کے حکام کے ساتھ اجلاس کیا ہے جس میں کسٹمز جنرل آرڈر میں ترامیم کر نے کا اصولی فیصلہ کیا گیا ہے

Tags: ·

چیف جسٹس آف پاکستان نے ایساف کنٹینرز سے سامان غائب کیے جانے کے سیکنڈل کا از خود نوٹس لے لیا

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

اسلام آباد ‘ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے انٹرنیشنل سیکورٹی فورس ان افغانستان (ایساف) کنٹینرز سے سامان غائب کیے جانے کے سیکنڈل کا از خود نوٹس لیتے ہوئے ڈی جی ایف آئی اے اور چیئر مین ایف بی آر سے 5 جولائی تک رپورٹس طلب کر لیں ۔ عدالت عظمیٰ کی طرف سے جاری بیان کے مطابق چیف جسٹس نے یہ نوٹس پاکستان مسلم لیگ (ق) کے سیکرٹری جنرل مشاہد حسین سید کی طرف سے ایک مقامی اخبار میں کی گئی اپیل پر لیا ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ ملکی تاریخ کا سب سے بڑا غبن ہوا ہے جس سے 220 ارب روپے کا نقصان ہوا ہے لہذا سپریم کورٹ اس کا از خود نوٹس لے جس پر چیف جسٹس نے کسٹم سکینڈل کیس کا از خود نوٹس لے لیا ہے اور ڈی جی ایف آئی اے اور چیئرمین ایف بی آر کو 5 جولائی کو رپورٹ طلب کر لی ہے اس رپورٹ کے بعد تحقیقات کاباقاعدہ آغاز کیا جائے گا اور کسٹم حکام اور دیگر ملوث افراد کو طلب کر کے انکوائری مکمل کی جائے گی ۔ یاد رہے 220 ارب روپے مالیت کا سامان افغانستان بھیجوایا جانا تھا مگر وہاں بھیجوانے کی بجائے کنٹینر ز پاکستان میں غائب کر دیئے گئے جس سے ایف بی آر کو 220 ارب روپے کا نقصان ہوا اخباروں میں بھی ایساف کے 11 ہزار 727 کنٹینروں کے غائب ہونے کی خبر شائع ہوئی تھی

Tags:

فیصل آباد ، حساس ادارے کے اہلکاروں کے تشدد سے 65 سالہ پروفیسر جاں بحق

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

٭۔ ۔ ۔ محلہ داروں نے سادہ کپڑوں میں ملبوس ملازمین کو قابو کر لیا
فیصل آباد( ثناء نیوز )حساس ادارے کے اہل کاروں کی طرف سے اغوا کرنے کی کوشش میں 65 سالہ پروفیسر عبدالقیوم تشدد کی وجہ سے جاں بحق ، اہل علاقہ نے سادہ کپڑوں میں ملبوس حساس ادارے کے ملازمین کو قابو میں کر لیا جبکہ ان کے ہمراہ آنے والے موٹر سائیکل سوار پولیس اہلکار موقع واردات سے فرار ۔ مقامی افراد کے احتجاج پر پولیس نے مقدمہ درج کر لیا ۔ دونوں اہلکار پولیس حراست میں ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق تھانہ بٹالہ کالونی کے علاقہ الفیاض کالونی میں حساس ادارے کے دو سادہ پوش اہلکاروں نے پولیس سکواڈکے دواہلکاروں کے ہمارہ رکشہ میں گھر جاتے ہوئے 65 سالہ پی ایچ ڈی ڈاکٹر عبدالقیوم کو رکشہ سے اتار کر تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے ساتھ لے جانے کی کوشش کی جس کے نتیجے میں عبدالقیوم موقع پر جاں بحق ہو گیا ۔ علاقہ کے مکینوں نے فوری طور پر احتجاج شروع کر دیا اور موقع پر موجودحساس ادارے کے اہلکارںکو قابو کر لیا جبکہ پولیس اہلکار موقع سے فرار ہو گئے ۔ اہل علاقہ کے احتجاج کے نتیجہ میں پولیس کے اعلی حکام کے موقع پر پہنچنے اور مذاکرات کے نتیجہ میں ملزمان کی گفتاری اور پرچہ درج کرنے کی یقین دہانی پر احتجاج ختم کیا ۔ معہوم ہوا ہے کہ مقتول کا حساس ادارے کے ایک سینور اہل کار کے قریبی عزیز مختار سے لین دین کا تنازعہ تھا جس پر اس کو مسلسل حساس ادارے کے نام پر ذہنی ٹارچر بھی کیا جاتا رہا ہے اور اب باقاعدہ تشدد اور اغوا کرنے کی کوشش میں اس کی جان چلی گئی ۔ تھانہ بٹالہ کالونی میں کاشف فریاد اور عمران نامی حساس ادارے کے ملازمین اور پولیس اہلکاروں کے خلاف قتل کی ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے

Tags:

چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ خواجہ محمد شریف کو سیاست کااتنا شوق ہے تو استعفی دے کر میدان میں آئیں اور کونسلر کا الیکشن لڑیں ۔۔راجہ ریاض احمد

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

٭۔ ۔ ۔ کون سے آئین میں جسٹس خواجہ محمد شریف کو ن لیگ کا ترجمان بننے کا اختیار دیا ، لگتا ہے پیپلز پارٹی کا عدالتی احتساب کیا جا رہا ہے
٭۔ ۔ ۔ جسٹس افتخار محمد چوہدری لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس کے بیان پر از خود نوٹس لیں ، پیپلز پارٹی اس کے خلاف جوڈیشل کونسل میں بھی درخواست دے گی ۔ راجہ ریاض احمد کی پریس کانفرنس

لاہور‘ سینئر صوبائی وزیر و پنجاب اسمبلی میں پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر راجہ ریاض احمد نے کہا ہے کہ چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ خواجہ محمد شریف کو سیاست کااتنا شوق ہے تو استعفی دے کر میدان میں آجائیں اور آئندہ انتخابات میں مسلم لیگ ن کے ٹکٹ پر کونسلر کا الیکشن لڑیں پیپلز پارٹی ان کے مقابلے میں امیدوار کھڑا کرے گی۔ ان خیالات کا اظہار انہوںنے لاہور پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ راجہ ریاض احمد نے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری سے اپیل کی کہ وہ جسٹس خواجہ محمد شریف کے سیاسی بیان کا ازخود نوٹس لیں ۔ انہوںنے کہا کہ پیپلز پارٹی اس معاملہ کو سپریم جوڈیشل کونسل میں بھی اٹھائے گی ۔ راجہ ریاض احمد نے کہا کہ کیا آئین چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو اس بات کی اجازت دیتا ہے کہ وہ ایک سیاسی جماعت کی ترجمانی کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کو اقتدار سے الگ ہونے کے مشورے دیں ۔ ایسا لگتا ہے کہ پیپلز پارٹی کا عدالتی احتساب کیا جا رہا ہے ۔ انہوںنے کہا کہ مسلم لیگ ن کے قائد میاں نواز شریف آج کس منہ سے عدلیہ اور جمہوریت کی بحالی کے راگ الاپ رہے ہیں وہ خود جنرل ضیاء الحق کے دور میں وزیر خزانہ رہے ان کے ساتھیوں نے سپریم کورٹ پر حملہ کیا جس میں بعض افراد کو سزائیں بھی سنائی گئیں ۔ راجہ ریاض احمد نے کہا کہ میں پہلے ہی کہہ چکا ہوں کہ آئین میں 18 ویں ترمیم اور تیسری بار وزیر اعظم بننے کے خاتمہ کے بعد میاں نواز شریف بہت بے تاب ہو چکے ہیں اور اب وہ حیلے بہانوں سے مڈٹرم انتخابات کی طرف بڑھنا چاہتے ہیں ۔ میں یقین سے کہتا ہوں کہ آئندہ دو ماہ کے دوران ملک میں وہ مڈٹرم انتخابات کروانے کا باقاعدہ مطالبہ بھی کر دیں گے ۔ انہوںنے کہا کہ پیپلز پارٹی ان کے ان عزائم کی بھرپور مخالفت کرے گی ۔ ملک میں انتخابات موجودہ اسمبلیوں کی مدت پوری ہونے کے بعدہی کروائے جائیں گے

Tags: ·

مسلم لیگ ن کے رکن پنجاب اسمبلی یاسر رضا نا اہل قرار دے دئیے گئے

June 30th, 2010 · No Comments · پاکستان

ہائی کورٹ نے پی پی حلقہ 13 راولپنڈی میں دوبارہ انتخابات کر انے کا حکم دے دیا
راولپنڈی ‘ ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ کے جج خواجہ امتیاز احمد نے پاکستان مسلم لیگ ن کے رکن صوبائی اسمبلی ملک یاسر رضا کی تعلیمی اسناد سے متعلق پی پی پی کے سابق ایم پی اے اشتیاق مرزا ایڈووکیٹ کی جانب سے دائر کردہ الیکشن پٹیشن کی سماعت کے بعد الیکشن پٹیشن منظور کر تے ہوئے اس حلقہ میں دوبارہ الیکشن کر انے کا حکم جاری کر دیا ہے۔فاضل عدالت میں فیصلہ کے وقت رکن صوبائی اسمبلی ملک یاسر رضا اپنے والد ملک رضا اسد کو نسل سردار عبدالرزاق کے ہمراہ عدالت میں موجود تھے فاضل جج نے اپنے مختصر فیصلہ میں کہا کہ الیکشن پٹیشن منظور کر کے اس حلقہ میں ری الیکشن کا آرڈر دیا جاتا ہے اس طرح رکن صوبائی اسمبلی ملک یاسر رضا کو پنجاب اسمبلی کی اس نشست سے ہاتھ دھونا پڑے ہیں۔ یاد رہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی کے سابق ایم پی اے اور سابق امیدوار پی پی 13 اشتیاق احمد مرزا نے مسلم لیگ ن کے ملک یاسر رضا کے خلاف الیکشن پٹیشن میں موقف اختیار کیا تھا کہ ان کی تعلیمی اسناد جعلی ہیں اور بالخصوص ایف اے کی سند کے حوالے سے ابہام پایا جاتا ہے جس میں داخلہ کے فارم پر ملک یاسر رضا کی تصویر کی بجائے کسی اور کی تصویر تھی ادھر اس عدالتی فیصلہ کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ملک یاسر رضا نے کہا کہ وہ اس فیصلہ کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ کی قیادت کی اجازت سے وہ دوبارہ الیکشن میں حصہ لیں گے اور ایک بار پھر عوام کی محبت اور اپنے کام کی بدولت دوبارہ منتخب ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ حق و انصاف کے لئے کوشش کر نا میرا حق ہے تاہم عدلیہ کا احترام بھی ملحوظ خاطر رکھا جائے گا۔ انہوں نے اس موقع پر یہاں موجود لیگی ورکروں اور اپنے حلقہ کے عوام کا بھی شکریہ ادا کیا ملک یاسر رضا کے وکیل سر دار عبدالرازق کا کہنا تھا کہ وہ فیصلے کی نقول کے لئے جمعرات یا جمعہ کو درخواست کریں گے۔ نقول ملنے کے بعد وہ اس فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ تعلیمی بورڈز حکام نے بی اے اور ایف اے کی اسناد کی تصدیق کی تھی کہ یہ درست ہیں ۔ سمجھ نہیں آتا کہ کس طرح فیصلہ کیا گیا۔ حالانکہ جو شہادتیں پیش کی گئیں وہ من گھڑت تھیں ۔ انہوں نے فیصلہ کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے کہا کہ الیکشن پٹیشن کی سماعت کے بعد عدالت نے جو فیصلہ دیا وہ عدالت کا حق ہے مگر ہم اس فیصلہ کے خلاف سپریم کورٹ میں جائیں گے۔

Tags: ·

雪茄| 雪茄烟网购/雪茄网购| 雪茄专卖店| 古巴雪茄专卖网| 古巴雪茄价格| 雪茄价格| 雪茄怎么抽| 雪茄哪里买| 雪茄海淘| 古巴雪茄品牌| 推荐一个卖雪茄的网站| 非古雪茄| 陈年雪茄| 限量版雪茄| 高希霸| 帕特加斯d4| 保利华雪茄| 大卫杜夫雪茄| 蒙特雪茄| 好友雪茄

古巴雪茄品牌| 非古雪茄品牌

Addmotor electric bike shop

Beauties' Secret化妝及護膚品

DecorCollection歐洲傢俬| 傢俬/家俬/家私| 意大利傢俬/實木傢俬| 梳化| 意大利梳化/歐洲梳化| 餐桌/餐枱/餐檯| 餐椅| 電視櫃| 衣櫃| 床架| 茶几

Wycombe Abbey| 香港威雅學校| private school hong kong| English primary school Hong Kong| primary education| top schools in Hong Kong| best international schools hong kong| best primary schools in hong kong| school day| boarding school Hong Kong| 香港威雅國際學校| Wycombe Abbey School

邮件营销| 電郵推廣| edm营销| 邮件群发软件| 营销软件|