Urdu News

Urdu News…The 3rd Largest Online Urdu Newspaper

Urdu News header image 4

Entries Tagged as 'ہندوستان'

پاکستان کا ممبئی حملوں کے ملزمان سے تفتیش کے لیے بھارتی تحقیقاتی ایجنسی این آئی اے کو اجازت دینے سے انکار

February 8th, 2011 · No Comments · پاکستان, ہندوستان

نئی دہلی ‘ پاکستان نے بھارتی نیشنل انوسٹی گیشن ایجنسی ( این آئی اے ) کی ٹیم کو ممبئی حملوںکے ملزمان سے تفتیش کرنے کے لیے پاکستان آنے کی اجازت دینے کی تردید کی ہے ۔ بھارتی اخبار ’’ دی ہندو ‘‘ کے مطابق پاکستان کا کہنا ہے کہ اس نے بھارتی نیشنل انوسٹی گیشن ایجنسی ( این آئی اے ) کی ٹیم کو ایسی کوئی اجازت نہیں دی کہ جس سے بھارتی ٹیم پاکستان آ کر ممبئی حملوں کے ملزمان سے پوچھ گچھ کرے ۔ سرکاری ذرائع کے مطابق کچھ دن قبل اسلام آباد نے نئی دہلی کو یہ پیغام دیا تھا کہ پاکستان کا قانون اس معاملے میں کسی غیر ملکی تحقیقاتی ایجنسی کو پوچھ گچھ کی قطعی اجازت نہیں دیتا ۔ ذرائع کا کہنا تھا کہ پاکستانی کمیشن کو بھارت بھیجنے کی درخواست بھارتی اپیل سے منسلک نہیں کرنا چاہیے ۔ کیونکہ پاکستان نے عدالتی فیصلے کے بعد بھارت کو درخواست بھیجی تھی ۔ اسلام آباد نے نئی دہلی سے یہ بھی کہا تھا کہ دونوں ممالک کے درمیان اس حوالے سے مشترکہ چارہ جوئی کا نہ تو کوئی معاہدہ ہوا ہے اور نہ ہی وہ اس قسم کی منظوری کی سہولت فراہم کر سکتا ہے ۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا تھا کہ عدالت سے متعلقہ فیصلے کی منظوری کے بعد بھارت کو پاکستان ٹیم بھیجنے کے لیے دوبارہ رسائی حاصل کرنا ہوگی ۔ واضح رہے کہ پاکستان کی جانب سے اس بات کی تردید اس وقت سامنے آئی جب بھارت کو پاکستان کی جانب سے عدالتی کمیشن کے لیے درخواست آئی ۔

Tags:

پاکستان اور اسامہ بن لادن نظریاتی طور پر ایک ہیں،بھارتی سازشوں بارے وکی لیکس کا انکشاف

February 7th, 2011 · No Comments · دنیا کی خبریں, پاکستان, ہندوستان

پاکستان کی اسٹبلشمنٹ خطے کی سلامتی کیلئے سب سے بڑا خطرہ بنی ہوئی ہے‘ ڈاکٹر اجیاسہنی
امریکا نے پرویز مشرف پر ضرورت سے زیادہ اعتبار کیا جس کی وجہ سے کافی نقصان اٹھانا پڑا‘ سابق سربراہ ’’ را‘ ‘ اے ایس د لت
آئی ایس آئی چند مشہور دہشتگردوں کو گرفتار کرکے امریکا کو بے وقوف بنارہی ہے جبکہ اسامہ بن لادن کو آزاد چھوڑ رکھا ہے
علی محمد جان اورکزئی کو صوبہ سرحد کا گورنر بنانے پر سابق بھارتی سفیر گوپال سوامی نے کہا کہ وہ امریکا سے شدید نفرت کرتا ہے

نئی دہلی ‘ بھارت نے دہشتگردی کا سارا ملبہ پاکستان پر ڈالنے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔ وکی لیکس نے بھارتی حکام کی امریکیوں سے ملاقات میں الزام تراشیوں کا بھانڈہ پھوڑا ہے۔ بھارتی عہدیداروں نے پاکستانی اسٹبلشمنٹ کو تو خطے کی سلامتی کیلئے سب سے بڑا خطرہ قرار دیا ہے ساتھ یہ بھی الزام لگایا کہ پاکستان امریکا کے افغانستان میں ناکام ہونے کا انتظار کررہا ہے۔18 دسمبر 2006 کو نئی دہلی میں پولیٹیکل قونصلرٹید اوسیئس نے واشنگٹن کو مراسلہ بھیجا جس میں 7 دسمبر کو بھارتی ماہرین اور سابق عہدیداروں کی انسداد دہشتگردی کے ڈپٹی معاون ورجینیا پالمر اور دیگر امریکی حکام سے ملاقات کی تفصیل بتائی گئی۔ اس ملاقات میں پاکستان کیلئے سابق بھارت ی سفیر گوپال سوامی پرتھاسراتھی بھی شریک تھے جو اس وقت افغانستان میں قیام سے متعلق بھارتی کمیٹی کے ماہر کے طور پر خدمات انجام دے رہے تھے۔ امریکی عہدیداروں سے ملاقات میں انسداد دہشت گردی کے ماہر ڈاکٹر اجیاسہنی نے الزام عائد کیا کہ پاکستان کی اسٹبلشمنٹ خطے کی سلامتی کیلئے سب سے بڑا خطرہ بنی ہوئی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور اسامہ بن لادن نظریاتی طور پر ایک ہیں۔ طالبان پاکستان کی اسٹریٹیجک دہشتگردی سے جڑے ہیں۔ اس موقع پر بھارتی خفیہ ایجنسی’’ را‘ ‘کے سابق سربراہ اے ایس د لت نے کہا کہ امریکا نے پرویز مشرف پر ضرورت سے زیادہ اعتبار کیا جس کی وجہ سے کافی نقصان اٹھانا پڑا۔’ ’را‘ ‘ سابق سربراہ کا کہنا تھا کہ اگر امریکا افغانستان اور بھارت میں پاکستان کی جانب سے ریاستی دہشتگردی بند کرانا چاہتا ہے تو اسے پرویز مشرف پر دباؤڈالنا ہوگا۔ پاکستان کی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے بارے میں ڈاکٹر اجیاسہنی نے کہا کہ اگرچہ یہ آرگنائزیشن پاکستان کے فوجی ڈھانچے کا ایک ڈسپلن حصہ ہے لیکن آئی ایس آئی چند مشہور دہشتگردوں کو گرفتار کرکے امریکا کو بے وقوف بنارہی ہے جبکہ اسامہ بن لادن کو آزاد چھوڑ رکھا ہے۔ علی محمد جان اورکزئی کو صوبہ سرحد کا گورنر بنانے پر پاکستان میں سابق بھارتی سفیر گوپال سوامی نے کہا کہ وہ امریکا سے شدید نفرت کرتا ہے۔ بھارتی ماہرین نے امریکی عہدیداروں سے ملاقات میں پاکستان پر توجہ مرکوز رکھی جبکہ افغانستان میں امریکا کو لمبے عرصے تک ٹہرانے پر بھی زور دیا۔

Tags:

ممبئی حملہ کیس میں اجمل قصاب کی سزا کیخلاف اپیل مسترد ،تفصیلی فیصلہ21 فروری کو سنایا جائے گا

February 7th, 2011 · No Comments · ہندوستان

ممبئی ‘ممبئی ہائی کورٹ نے اجمل قصاب کی سزا کیخلاف اپیل مسترد کر دی۔ تفصیلی فیصلہ21 فروری کو سنایا جائے گا۔ بھارتی میڈیا کے مطابق ممبئی حملوں کے مبینہ ملزم اجمل قصاب نے خصوصی عدالت کی سزا ممبئی ہائی کورٹ میں چیلنج کی تھی۔ ہائی کورٹ نے اجمل قصاب کی اپیل مسترد کرتے ہوئے خصوصی عدالت کی طرف سے دی گئی سزائے موت کا فیصلہ برقرار رکھا۔ اجمل قصاب کیس کا تفصیلی فیصلہ اکیس فروری کو سنایا جائے گا۔

Tags:

بھارتی فورسز انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث ہیں‘ ہیومن رائٹس واچ

February 3rd, 2011 · No Comments · ہندوستان

زیر حراست تشدد کا شکار ہونے والے زیادہ تر افراد مسلمان ہیں
مالیگاؤں اور دو دیگر شہروں میں بم دھماکوں کے سلسلے میں گرفتار نو مسلمانوں کے خلاف الزامات کی غیر جانبدار انہ تفتیش کی جائے
بھارتی وزارت داخلہ کا رپورٹ پر رد عمل ظاہر کرنے سے انکار

نیویارک‘انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے کہا ہے کہ بھارتی فورسز مذہبی انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کی مرتکب ہورہی ہے اور اس کی طرف سے اقلیتوں کیساتھ تعصب برتا جاتا ہے اور زیر حراست تشدد کا شکار ہونے والے زیادہ تر افراد مسلمان ہیں۔بھارتی وزارت داخلہ نے رپورٹ پر رد عمل ظاہر کرنے سے انکار کیا ہے ۔ہیومن رائٹس واچ نے دہشت گردی کے ملزمان سے تشدد کے متعلق ایک سو چھ صفحات پر مشتمل اپنی رپورٹ میں کہاہے کہ بھارتی سیکیورٹی فورسز انسداد دہشت گردی کے مقدمات میں مذہبی تعصب برتتی ہیں اور دوران حراست تشدد کے مختلف واقعات میں ملوث ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ نئی دلی ،احمد آباد اور جے پور دھماکوں کے بعد انسداد دہشت گردی کے مقدمات میں سیکیورٹی فورسز کی جانب سے تشدد معمول کی بات بن چکی ہے۔رپورٹ کے مطابق جب تشدد کے خاتمے کے لئے انصاف کے نظام میں اصلاحات کی ضرورت ہے تاہم بھارتی حکومت اس کے لئے اقدامات کرنے کو تیار نظر نہیں آتی۔ہیومن رائٹس واچ نے مالیگاؤں اور دو دیگر شہروں میں ہونے والے بم دھماکوں کے سلسلے میں گرفتار کیے جانے والے نو مسلمانوں کے خلاف الزامات کی غیر جانبداری سے تفتیش کا مطالبہ بھی کیا ہے۔تازہ ترین تفتیش سے ان حملوں میں ہندو شدت پسندوں کا کردار سامنے آرہا ہے اور اس سلسلے میں کئی ہندو شدت پسندوں کوگرفتار بھی کیا گیا ہے۔ریاستی پولیس، جیل کے ا فسران اور دیگر حکام مرضی کے مطابق لوگوں کو گرفتار کرکے یا انہیں حراست میں رکھ کر ایذا رسانی اور مذہب کی بنیاد پر امتیازی سلوک کی شکل میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں کرتے ہیں۔ادارے کا کہنا ہے کہ انسانی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے ملک کے عدالتی نظام میں اصلاحات کی ضرورت ہے اور حکام کو لوگوں پر دہشتگردی کے غلط الزامات عائد کرنے اور ڈرا دھمکا کر اقبالیہ بیان حاصل کرنے کے واقعات کی روک تھام کے لیے ٹھوس کارروائی کرنی چاہیے۔ ساتھ ہی ایذا رسانی کے لیے ذمہ دار افسران کو بھی جوابدہ بنایا جانا چاہیے۔ ہیومن رائٹس واچ نے کہا کہ ریاستی پولیس، جیل کے ا فسران اور دیگر حکام مرضی کے مطابق لوگوں کو گرفتار کرکے یا انہیں حراست میں رکھ کر ایذا رسانی اور مذہب کی بنیاد پر امتیازی سلوک کی شکل میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں کرتے ہیں۔بھارتی وزارت داخلہ نے اس رپورٹ پر رد عمل ظاہر کرنے سے انکار کیا ہے۔ وزارت کے ترجمان اونکار کیڈیا نے غیر ملکی خبر رساں ادارے کو بتایا کہ حکومت انسانی حقوق کے لیے سرگرم اداروں کی رپورٹوں پر رد عمل ظاہر نہیں کرتی۔

Tags:

نمونیا ، بچوں کی اموات کا سب سے بڑا سبب ہے

February 2nd, 2011 · No Comments · صحت, ہندوستان

بھارت میں ہر سال 43 ملین بچے مرض کا شکار ہوتے ہیں ، عالمی ادارہ صحت کی رپورٹ
اقوام متحدہ ‘ عالمی ادارہ صحت ( ڈبلیو ایچ او ) کے اعداد و شمار سے پتہ چلا ہے کہ دنیا میں ہلاک ہونے والے 5 سال سے کم عمر کے بچوں کی کل تعداد کا 19 فیصد نمونیے کا شکار ہو کر لقمہ اجل بنتا ہے ۔ ڈبلیو ایچ او نے یہ انکشاف بھی کیا ہے کہ نمونیا کا شکار ہو کر ہلاک ہونے والے بچوں کی تعداد میزلز یا خسرے ، ملیریا اور ایڈز جیسی تین مہلک بیماریوں کے سبب ہونے والی بچوں کی اموات کی مجموعی تعداد سے بھی زیادہ ہے ۔ اس سلسلہ میں ترقی پذیر یا تیسری دنیا کے ممالک میں ہر سال نمونیا کے 156 ملین نئے کیسز رپورٹ ہوتے ہیں ۔ ان میں سے 8.7 فیصد کیسز نہایت سنگین نوعیت کے ہوتے ہیں ۔ یعنی ان میں جان کا خطرہ لاحق ہوتا ہے اور انہیں ہسپتال میں داخل کرانا ناگزیر ہو جاتا ہے ۔ ہر سال بچوں میں نمونیے کے نئے کیسز میں مبتلا ہونے والے 5 سال سے کم عمر بچوں کی سب سے بڑی تعداد بھارت میں ہے ۔ ڈبلیو ایچ او کی بھارتی شاخ کے اعداد و شمار کے مطابق ہر سال بھارت میں 43 ملین ایسے نئے کیسز سامنے آتے ہیں ۔ چین اس سلسلہ میں دوسرے نمبر پر ہے جہاں ہر سال 21 ملین جبکہ پاکستان میں 10 ملین بچے ملیریا کی لپیٹ میں آتے ہیں ۔ محض بھارت میں ہر سال 4 لاکھ 10 ہزار بچوں کی جانیں نمونیا کے سبب ضائع ہو جاتی ہے ۔ طبی ماہرین کے متعدد تحقیقی جائزوں کے مطابق افسوسناک امر یہ ہے کہ نمونیا سے بچوں کی اموات پر قابو پایا جاتا ہے اور اس کے بہت سے طریقے ہیں مثلا نمونیا سے بچاؤ کے لیے بچوں کو ایسے ٹیکے لگائے جا سکتے ہیں جن سے ان کے اندر اس موذی بیماری کے خلاف قوت مدافعت پیدا ہو جائے ۔ اس کے علاوہ اگر بچے کے اندر نمونیا کے مرض کی تشخیص وقت پر ہو جائے تو بچے کو ممکنہ علاج کے ذریعے بچایا جا سکتا ہے ۔ طبی ماہرین کا یہ بھی کہنا ہے کہ شیر خوار بچوں کی مائیں اگرچہ 6 ماہ تک اضافی طور پر اپنا دودھ پلائیں تو بھی بچے پر نمونیا کے حملے کے امکانات بہت کم ہو سکتے ہیں اور گھروں کے اندر ہوا میں آلودگی کم ہونے سے بھی بچوں کو نمونیے سے محفوظ رکھا جا سکتا ہے ۔ اس سلسلہ میں طبی ماہر ین نے ایک نہایت اہم نکتہ اٹھا یا ہے اور وہ یہ کہ دنیا بھر میں اینٹی بائیوٹیکس کا استعمال عام ہونے کے سبب مریضوں کے اندر جن میں بچے بھی شامل ہیں ۔ ان اینٹی بائیکوٹکس کے خلاف مدافعت پید ا ہوتی جا رہی ہے اس کے نتیجے میں یہ بہت سی بیماریوں کے لیے کئے جانے والا علاج غیر موثر ثابت ہورہا ہے ۔ اس تناظر میں محققین اس امر پر غیر معمولی زور دے رہے ہیں کہ نمونیے سے بچاؤ کے لیے بچوں کے اندر اس موذی بیماری کے خلاف قوت مدافعت پیدا کی جانی چاہیے ۔ اس کے لیے پی وی سی ٹیکے ایجاد ہو چکے ہیں ۔ تاہم تیسری دنیا کے ممالک کا سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ وہاں اب تک عوام کو صحت کی بنیادی سہولیات میسر نہیں ہیں اور مہلک بیماریوں سے بچاؤ کے لیے دستیاب ادویات اور ٹیکے وغیرہ اتنے گراں ہیں کہ بہت کم لوگ اس سے استفادہ کر سکتے ہیں ۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کا کہنا ہے کہ 2015 میں دنیا بھر میں بچوں کی اموات میں دو تہائی کمی کا ہزاریہ ہدف تبھی پورا ہو سکے گا جب زیادہ تر بچوں کو پی وی سی ٹیکے دئیے جائیں

Tags:

موبائل فون کے استعمال سے لڑکیاں بے حیا ہو جاتی ہیں

February 1st, 2011 · No Comments · دنیا کی خبریں, ہندوستان

نئی دہلی ‘ کل ہند مسلم پرسنل لاء بورڈ نے نوجوانوں بالخصوص لڑکیوں کی جانب سے موبائل فون کے استعمال کی مخالفت کرتے ہوئے ایک قرار داد منظور کی اور اسے بے حیائی قرار دیا ۔ پرسنل لاء بورڈ کی جانب سے بریلی میں قومی کنونشن میں منظورہ قرار داد میں کہا گیا کہ والدین کو اس بات کو یقینی بنانا چاہئے کہ ان کے بچے بالخصوص لڑکیاں موبائل فون کا استعمال نہ کریں کیونکہ اس سے وہ بے حیا ہو جاتی ہیں ۔ مسلم پرسنل لاء بورڈ کے صدر مولانا توقیر رضا خان نے کہا کہ مسلم خاندانوں کو اس بات پر سختی سے عمل کرنا چاہئے ۔ تاہم انہوں نے کہا کہ لڑکیوں کی تعلیم بہت اہم ہے ۔

Tags: ·

کشمیر ایک سیاسی مسئلہ ہے جسے سیاسی بنیادوں پر ہی حل کیاجاسکتا ہے۔بھارتی جنرل کا اعلان

February 1st, 2011 · No Comments · کشمیر, ہندوستان

سری نگر ‘ بھارتی فوج کے لیفٹیننٹ جنرل عطا محمد حسنین نے مسئلہ کشمیر کو سیاسی مسئلہ قرار دیتے ہوئے دوٹوک الفاظ میں واضح کردیا کہ موجودہ حالات میں ریاست جموں و کشمیر سے فوجی انخلاء کیلئے ماحول سازگار نہیں ہے تاہم فورسز کو حاصل خصوسی اختیارات واپس لینے کیلئے بھارتی حکومت ہی اقدامات اٹھاسکتی ہے۔ فوج کے اہتمام سے جنوبی کشمیر کے قصبے اسلام آباد میں قائم فسٹ سیکٹر آر آر کے ہیڈکوارٹر پر ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے لیفٹیننٹ جنرل عطا حسنین نے کہا کہ کشمیر ایک سیاسی مسئلہ ہے جسے سیاسی بنیادوں پر ہی حل کیاجاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ افسپا مجاہد مخالف کارروائی کے دوران فوج کو ایک ڈھال فراہم کرتی ہے تاہم ان کاکہناتھا کہ اگر فورسز کو حاصل خصوصی اختیارات چھین لینے کیلئے مرکزی سرکار کی طرفسے کوئی فیصلہ لیا جاتا ہے تو فوج اس میں رکاوٹ نہیں بنے گی۔ انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کا حل تلاش کرنا اور افسپا کو ہٹانا دونوں سیاسی نوعیت کے فیصلے ہیں اور فوج کا ان میں کوئی عمل دخل نہیں۔ ایک سوال کے جواب میں جنرل آفیسر کمانڈنگ نے کہا کہ آزاد کشمیر میں ابھی بھی درجنوں ٹریننگ کیمپ موجود ہیں جہاں مجاہدین کو بھارت کی سالمیت اور انفرادیت کو زک پہنچانے کیلئے اسلحہ چلانے کی تربیت فراہم کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حالیہ برف باری اور موسمی حالات کی وجہ سے فی الوقت سرحد پر کوئی دراندازی نہیں ہورہی ہے تاہم انہوں نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ برف پگھلنے اور موسمی حالات میں سدھار آنے کیساتھ ہی مجاہدین ایک مرتبہ پھر سرحد کے اِس پار دراندازی کرنے کیلئے کوششیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ فوج کو خفیہ ذرائع سے اطلاع موصول ہورہی ہے کہ سرحد کے اْس پار درجنوں مجاہدین بھاری ہتھیاروں سے لیس ہیں اور وہ اِس پار داخل ہونے کیلئے موقعے کی تلاش میں ہیں۔ انہو ں نے کہا کہ لائن آف کنٹرول پر تعینات فوج کو انتہائی چوکس کردیا گیا ہے اور کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کیلئے فوج کو ہروقت تیاری کی حالت میں رکھا گیا ہے۔ جنرل آفیسر کمانڈنگ نے کہا کہ سرحد کیساتھ ساتھ میدانی علاقوں میں بھی تعینات فوج کو چوکنا کردیا گیا ہے ۔ اس موقعہ پر فوجی انخلاء سے متعلق صحافیوں کی طرف سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں جنرل حسنین نے کہا کہ فی الوقت ریاست جموں و کشمیر سے فوجی انخلاء کیلئے ماحول ساز گار نہیں ہے کیونکہ ابھی بھی سینکڑوں مجاہدین کارروائیاں انجام دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فوجی سربراہ جنرل وی کے سنگھ نے فوجی انخلاء سے متعلق جو بیان دیا ہے فوج کا وہی موقف ہے۔اس سے قبل تقریب سے خطاب کرتے ہوئے جنرل حسنین نے کہا کہ وہ امن کا پیغام لیکر اسلام آباد آئے ہیں

Tags:

مسلم لیگ ق کے ہندو رکن رام سنگھ سودھو اپنے اہلِ خانہ سمیت بھارت منتقل ہو گئے

January 30th, 2011 · 1 Comment · پاکستان, ہندوستان

حیدر آباد ‘سندھ اسمبلی میں مسلم لیگ ق کے ہندو رکن رام سنگھ سودھو اپنے اہلِ خانہ کے ہمراہ بھارت منتقل ہو گئے ہیں۔اسمبلی کی رکنیت سے ان کا استعفی ان کے بھارت منتقل ہونے کے چھ ماہ بعد سنیچر کو جمع کرایا گیا۔ رام سنگھ سودھو کی بھارت منتقلی کی تصدیق ضلع تھرپارکر سے ق لیگ کے منتخب رکن قومی اسمبلی عبد الرزاق راہوں نے بھی کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ رام سنگھ بجٹ اجلاس کے بعد علاج کا کہہ کر بھارت گئے تھے لیکن بعد میں ان کا خاندان بھی وہاں منتقل ہو گیا۔راہوں کا کہنا ہے کہ بھارت میں ڈکٹروں نے انہیں دو سال آرام کا مشورہ دیا تھا جس کے بعد انہوں نے اسمبلی کی رکنیت سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔رام سنگھ نے تھرپارکر میں اپنی رہائش گاہ اور دیگر جائیداد فروخت کر دی ہے۔رام سنگھ سودھو ضلع تھرپارکر کے اہم ہندو سیاست داں تھے۔ وہ سن پچاسی میں سندھ اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے تھے۔ وہ حکومت کے مشیر بھی رہ چکے ہیں۔ مشرف دور میں رام سنگھ سودھو تھرپارکر ضلع کونسل کے نائب ناظم کے فرائض بھی انجام دے چکے ہیں۔پاکستان کے پہلے وزیر قانون جوگندر ناتھ منڈل بھی پاکستان سے بھارت منتقل ہوگئے تھے۔ سنہ اکہتر میں مغربی پاکستان اسمبلی کے رکن رانا لچھمن سنگھ بھی بھارت منتقل ہوئے، مہرو مل جگوانی سن پچاسی میں سندھ اسمبلی کے رکن تھے وہ بھی بعد میں بھارت منتقل ہو گئے تھے۔ایک اندازے کے مطابق پاکستان سے ہر ماہ ایک نہ ایک ہندو خاندان کسی نہ کسی سبب بھارت منتقل ہو رہا ہے۔ منتقل ہونے والے خاندان اپنی منتقلی کی وجہ پاکستان میں ان کے جان و مال کو درپیش خطرات بتاتے ہیں۔بھارت منتقلی میں ضلع جیکب آباد کے ہندو گھرانوں کی اکثریت ہے۔ ضلع جیکب آباد میں اکثر ہندو گھرانے لاقانونیت کا شکار رہتے ہیں۔ لوٹ مار، ہندوؤں کے گھروں پر ڈاکہ زنی اور ان کے بچوں کا اغوا ضلع جیکب آباد میں ایک معمول بن گیا ہے۔

Tags: ·

کرپشن بھارت کے سیاسی نظام میں ایک سنگین بحران کا سبب بن سکتا ہے جرمنی کی رپورٹ

January 30th, 2011 · No Comments · دنیا کی خبریں, ہندوستان

برلن ‘ کرپشن بھارت کے سیاسی نظام میں ایک سنگین بحران کا سبب بن سکتا ہے اور یہ بھارت کی طویل المیعاد اقتصادی ترقی کو کسی بھی موڑ پر اچانک بریک لگنے کا باعث بنے گا۔جرمنی کے وزنامے برلینر ٹاگس کی رپورٹ کیے مطابق کرپشن بھارت کے سیاسی نظام میں ایک سنگین بحران کا سبب بن سکتا ہے اور یہ بھارت کی طویل المیعاد اقتصادی ترقی کو کسی بھی موڑ پر اچانک بریک لگنے کا باعث بنے گا۔ اس طرح بھارت کا دنیا کی ایک بڑی اقتصادی قوت بننے کا خواب چکنا چور ہو سکتا ہے اور بدعنوانی کے واقعات اس ملک کو کئی دہائیاں پیچھے دھکیل سکتے ہیں۔ برلینر ٹاگس سائیٹْنگ میں لکھا گیا ہے ’ بھارتی سیاست دان اکثر اپنے پروجیکٹس کی تکمیل میں ہونے والی تاخیر کو صحیح ثابت کرنے کے لیے سیاسی ہتھکنڈے استعمال کرتے اور جمہوری رکاوٹیں کھڑی کرتے ہیں۔ مثلاً یہ کہ سڑکوں کی تعمیر کے منصوبے پر اس لیے کام نہ ہو سکا کیونکہ کسان اپنی زمینوں سے دستبردار نہیں ہونا چاہتے اور بھارت میں کوئی بھی ان کسانوں پر اس بارے میں زبردستی نہیں کر سکتا۔ سماجی اور ترقیاتی کاموں کے سلسلے میں بھارت میں بڑی آسانی سے دروغ گوئی سے کام لیا جاتا ہے۔ حقیقت میں ہوتا یہ ہے کہ کسی بھی ترقیاتی پروجیکٹ پر آنے والے سرکاری اخراجات کی مد اتنی زیادہ بتائی جاتی ہے جو پہلے کسی نے سنی بھی نہیں ہوتی اور آخر کار پتہ یہ لگتا ہے کہ سیاستدانوں اور آجرین کی طرف سے جو ترقیاتی یا تعمیراتی کام مکمل کیا گیا ہے اْس کا معیار بتاتا ہے کہ ان کاموں پر درحقیقت بتائی گئی رقم سے کہیں کم خرچ ہوئی ہے‘۔ برلینر ٹاگس سائیٹْنگ مزید لکھتا ہے ’جموری نظام کی موجودگی کے باوجود بھارت میں ایک مضبوط اور قوت سے بھرپور اپوزیشن کی کمی پائی جاتی ہے۔ انتخابات کے سوا حکومت کے خلاف کوئی قانونی کارروائی نہیں کی جا سکتی۔ میڈیا کے ذریعے منظر عام پر آنے والے اسکینڈلز کے پیچھے زیادہ تر بڑے بڑے تاجروں کے نام چھپے ہوتے ہیں جو Big Buisness میں ملوث ہوتے ہیں اور ان پر ہاتھ ڈالنا لیبر یونین کے بس کی بات نہیں۔ اس صورت حال میں بھارتی عوام کو غیر ملکی اداروں سے تعلیم یافتہ ایسے نوجوان سیاستدانوں سے امیدیں وابستہ ہیں جو سیاست کے ساتھ ساتھ قانوں کی اہمیت سے بھی بخوبی واقف ہیں۔ مثلاً راہول گاندھی اور ان جیسے دیگر نوجوان سیاستدانوں سے۔ تاہم پرانے سیاسی اکابرین پہلے سے بھی زیادہ مضبوطی سے اپنی اپنی گدیوں پر براجمان نظر آ رہے ہیں

Tags:

پاکستان اور بھارت کے مابین ٹریک ٹو ڈپلومیسی کے تحت دوروزہ غیر سرکاری مذاکرات شروع

January 27th, 2011 · No Comments · پاکستان, ہندوستان

بھارت کے انسٹی ٹیوٹ آف پیس اینڈ سیکورٹی (آئی پی ایس) نے مذاکرات کا اہتمام کیا ہے
بینکاک ‘ پاکستان اور بھارت کے مابین ٹریک ٹو ڈپلومیسی کے تحت دوروزہ غیر سرکاری مذاکرات بینکاک میں جمعرات کو شروع ہوگئے ہیں ۔ مذاکرات کا اہتمام پاکستان کے تھینک ٹینک جناح انسٹی ٹیوٹ (جے آئی) اور بھارت کے انسٹی ٹیوٹ آف پیس اینڈ سیکورٹی (آئی پی ایس) نے کیا ہے ۔ دونوں ملکوںکے وزرائے خارجہ آئندہ ماہ ملاقات کر رہے ہیں اور دونوں ملکوں کے درمیان جامع مذاکرات کی بحالی کے امکانات روشن ہو رہے ہیں۔ بینکاک میں ہونے والے مذاکرات سرکاری سطح پر ہونے والی بات چیت کے متعلق مختلف معاملات کو ہموار کرنے کی کوشش کریں گے۔ کانفرنس میں پاکستان کی طرف سے شرکت کرنے والے وفد میں سابق چیف آف آرمی اسٹاف جنرل (ر) جہانگیر کرامت، سابق ہائی کمشنر برائے بھارت اور افغانستان عزیز خان، سابق سیکریٹری خارجہ ہمایوں خان شرکت کریں گے جبکہ وفد کی سربراہی جناح انسٹی ٹیوٹ کی صدر مس شیری رحمن کریں گی۔ ذرائع کے مطابق کانفرنس میں جن معاملات پر غور کیا جائے گا ان میں پاکستان اور بھارت کے درمیان جامع مذاکرات کی بحالی، سرکاری سطح پر آئندہ ہونے والے مذاکرات سے امیدیں اور دونوں ملکوں کے درمیان پائیدار امن کے قیام کیلئے روڈ میپ کی تیاری شامل ہے۔ خصوصی توجہ دونوں پڑوسیوں کے درمیان جوہری استحکام پر دی جائے گی۔

Tags: