Urdu News

Urdu News…The 3rd Largest Online Urdu Newspaper

Urdu News header image 4

Entries Tagged as 'سپورٹس'

سپاٹ فکسنگ کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا گیا

February 10th, 2011 · No Comments · سپورٹس

دبئی ‘ آئی سی سی نے اسپاٹ فکسنگ کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا۔آئی سی سی کی ویب سائٹ پر جاری کردہ فیصلہ ایک سو دو صفحات پر مشتمل ہے۔ تفصیلی فیصلے میں پانچ فروری کو دوحہ کے فیصلے کی توثیق کی گئی ہے۔ جس میں تین پاکستانی کرکٹرز محمد عامر، محمد اصف اور سلمان بٹ پر الزامات ثابت ہونے پر پابندیاں عائد کی گئیں تھیں۔ تفصیلی فیصلے میں تینوں کھلاڑیوں پر کریمنل چارجز عائد کئے گئے ہیں۔ آئی سی سی کے سربراہ ہارون لورگارٹ نے کہا ہے کہ ویب سائٹ پر فیصلہ شائع کرنے کا مقصد یہ بتانا ہے کہ آئی سی سی نے کتنے شفاف طریقے سے تحقیقات کی ہیں اس کے علاوہ تمام متعلقہ افراد کی فیصلے تک رسائی ممکن ہوسکے۔ تاہم برطانیہ میں ہونے والی تحقیقات کی وجہ سے فیصلے کے بعض نکات اور صفحات جاری نہیں کیے گئے ۔ برطانیہ میں فیصلے کے مندرجات تک رسائی اور اس کی اشاعت غیر قانونی قرار دے دی گئی ہے ۔ کھلاڑیوں کے خلاف اینٹی کرپشن کوڈ کے آرٹیکل ٹو کی متعدد شقوں کی خلاف ورزی کے تحت کارروائی کی گئی ۔ تفصیلی فیصلے میں بتایا گیا ہے کہ پہلے مظہر مجید کا ارادہ اوول ٹیسٹ میں اسپاٹ فکسنگ کا تھا لیکن ایسا نہیں ہوا ، اوول ٹیسٹ میں سلمان بٹ کو بھی میڈن اوور کھیلنے کو کہا گیا تھا اور سلمان بٹ اس کی اطلاع آئی سی سی کو دینے میں ناکام رہے ۔ تفصیلی فیصلے میں سب سے اہم نکتہ یہ ہے کہ لارڈز ٹیسٹ میں کرائی گئی نو بالز کی وضاحت میں تینوں کرکٹرز نے متضاد بیانات دئیے ۔ا یک موقع پر سلمان بٹ نے کہا کہ ہو سکتا ہے کہ لارڈز ٹیسٹ میں گڑبڑ ہوئی ہو لیکن وہ اس سے لاعلم ہیں تفصیلی فیصلے کے مطابق اسپاٹ فکسنگ کیس میں آئی سی سی کی جانب سے ذاکر خان ، شاہد آفریدی ، خواجہ نجم ، وقار یونس اور مظہر محمود سمیت پندرہ گواہ پیش ہوئے ۔ سلمان بٹ کے حق میں جیف لاسن ، ڈیوڈ ڈائر ، عبدالقادر اور اظہر زیدی نے تحریری بیانات دئیے ۔ محمد آصف کے گواہ کاؤنٹی کوچ محمد ہارون تھے جبکہ محمد عامر کا کوئی گواہ نہیں تھا۔ تفصیلی فیصلے میں کہا گیا کہ پلیئرز کا ایجنٹ مظہر مجید انڈر کور رپورٹر مظہرمحمود سے اسپاٹ فکسنگ کی ڈیل کرنے کے بعد تینوں کرکٹرز سے مسلسل رابطے میں تھا اس دوران فون پر ان کے جو رابطے ہوئے وہ مشکوک اور غیر معمولی پائے گئے ۔ تفصیلی فیصلے میں سلمان بٹ ، محمد عامر اور محمد اصف اور مظہر مجید کے موبل فونز کے ریکارڈ کی تفصیلات فراہم کی گئی ہیں۔ آئی سی سی ٹریبونل نے سلمان بٹ کو اسپاٹ فکسنگ میں مرکزی کردار قرار دیا ۔ ایک موقع پر سلمان بٹ کے پہلے وکیل آفتاب گل نے بھی گڑ بڑ کا اندیشہ ظاہر کردیا تھا تاہم فیصلے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ سلمان بٹ کا آن دی فیلڈر رویہ اچھا ہے اس لیے انہیں سدھرنے کا موقع دیا جا سکتا ہے فیصلے میں انکشاف کیا گیا ہے کہ محمد عامر کے خلاف بھی کیس کافی مضبوط تا کیوں کہ عامر نے مظہر مجید کی پیش گوئی کے عین مطابق نو بالز کیں ۔ آئی سی سی ٹریبونل کا موقف تھا کہ ٹیم میں ضرور کوئی تھا جو مظہر مجید کو اندر کی معلومات دے رہا تھا اور کپتان کے علاوہ یہ گارنٹی کوئی نہیں دے سکتا کہ کون سا بولر کتنے اوور کرائے گا ۔ مجموعی طورپر سلمان بٹ پر آئی سی سی اینٹی کرپشن کو ڈ کے آٹھ نکات کی خلاف ورزی جبکہ آصف اور عامر کے خلاف چھ ۔ چھ نکات کی خلاف ورزی کے الزام میں کارروائی کی گئی ۔ #

Tags:

کرکٹ ورلڈکپ 2011 : گروپ’’اے ‘‘ میں شامل ٹیموں کے بارے جائزہ رپورٹ جاری

February 8th, 2011 · No Comments · سپورٹس

پاکستانی ٹیم ’’ غیر یقینی ٹیم ‘‘ ہے کوئی بھی اپ سیٹ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے
شاہد آفریدی کی قیادت میں قوت سے جم کر کھیلی تو کئی بازیاں پلٹ سکتی ہے جائزہ رپورٹ
اسلام آباد ‘ عالمی کرکٹ کپ 2011 رواں ماہ کی 19 تاریخ سے شروع ہورہا ہے۔ دنیائے کرکٹ کے اس سب سے بڑے مقابلے میں کل 14 ٹیمیں حصہ لے رہی ہیں جنہیں دو گروپوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ گروپ “اے” میں شامل ٹیموں کے ایک جائزہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ آسٹریلیا اب تک ہونے والے کل نو ورلڈ کپس میں سے چار کی فاتح ٹیم ہے۔ 1987 میں پہلا کرکٹ ورلڈ کپ جیتنے والی آسٹریلین ٹیم گزشتہ تین مقابلوں (1999، 2003 اور 2007)میں لگاتار فتح حاصل کرتی آرہی ہے۔ دفاعی چیمپئن ہونے کے ناطے کینگروز اس بار بھی فتح کا تسلسل برقرار رکھنے اور اپنے اعزاز کا دفاع کرنے کی سرتوڑ کوشش کریں گے۔ سب سے زیادہ کرکٹ ورلڈ کپ اپنے نام کرنے کے اعزاز کے علاوہ بھی آسٹریلیا نے اس عالمی مقابلے میں کئی دیگر ریکارڈز قائم کررکھے ہیں جن میں ورلڈ کپ کے لگاتار 29 میچز میں فتح حاصل کرنا سرِ فہرست ہے۔ آسٹریلیا کے ورلڈ کپ اسکواڈ میں 2007 کے عالمی کپ میں فتح حاصل کرنے والی ٹیم کے پانچ کھلاڑی بھی موجود ہیں جس کے باعث آسٹریلیا کی ٹیم مضبوط پوزیشن میں آگئی ہے۔ ان کھلاڑیوں میں شان ٹیٹ، شین واٹسن، مائیک ہسی، مچل جانسن اور بریٹ لی شامل ہیں۔ تاہم آسٹریلین ٹیم حالیہ ایشز سیریز میں اپنی خراب کارکردگی اور دفاعی چیمپئن ہونے کے باعث دباؤ کا شکار بھی ہوسکتی ہے۔ مگر آخری وقت تک مقابلہ کرنے کی روایت کے سبب آسیز کا پلڑا اپنے حریفوں کے مقابل بھاری ہی رہنے کا امکان ہے۔ آئی سی سی ون ڈے رینکنگ میں پہلے نمبر پر آنے والی آسٹریلین ٹیم رکی پونٹنگ کی قیادت میں عالمی کرکٹ کپ 2011 اپنے نام کرنے کی مہم کا آغاز زمبابوے کے خلاف 21 فروری کو بھارتی شہر احمد آباد میں ہونے والے گروپ میچ سے کرے گی۔ جائزہ رپورٹ میں پاکستان کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ پاکستان کی قومی ٹیم کرکٹ کی تاریخ کی سب سے ‘غیر یقینی ٹیم’ قرار دیا جاتا ہے جو کسی بھی وقت کوئی بھی اپ سیٹ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ اگر تو قومی ٹیم کپتان شاہد آفریدی کی قیادت میں اپنی پوری قوت کے ساتھ جم کر کھیلی تو یہ کئی بازیاں پلٹ سکتی ہے، تاہم حالیہ اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں دو اہم بالرز ، محمد آصف اور محمد عامر سے محروم ہونے اور گزشتہ سال سے مسلسل مختلف اسکینڈلز کی زد میں رہنے کے باعث پاکستانی خاصے دباؤ کا شکار ہوں گے۔ گو کہ پاکستانی ٹیم کا مورال نیوزی لینڈکے خلاف حالیہ ٹیسٹ اور ون ڈے سیریز جیتنے کے بعد خاصا بلند تھا لیکن ورلڈ کپ سے عین دو ہفتے قبل آئی سی سی کی جانب سے اسپاٹ فکسنگ کیس کا فیصلہ سامنے آجانے کے بعد ٹیم ایک بار پھر دباؤ کا شکار ہوسکتی ہے۔پاکستانی ٹیم گزشتہ کئی سیریز سے مسلسل تنازعات، پی سی بی کے عجیب و غریب فیصلوں، کھلاڑیوں کی باہمی چپقلش اور اندرونی اختلافات کے باعث میڈیا میں “ان” رہی ہے تاہم نیوزی لینڈ کے حالیہ دورے کے دوران ٹیم نے بڑی حد تک ماضی کے ان اثرات سے چھٹکارا حاصل کرتے ہوئے کھیل بہتر بنانے پر اپنی توجہ مرکوز کرنے کا کامیاب مظاہرہ کیا ہے۔دیکھنا یہ ہے کہ 1992 کے ورلڈ کپ کی فاتح ٹیم 2011 کے عالمی مقابلے میں خود کو کس حد تک تنازعات سے بچاتے ہوئے بہتر کارکردگی پیش کرتی ہے۔پاکستان ورلڈ کپ کا اپنا پہلا میچ 23 فروری کو ہمبنتوتا، سری لنکا میں کینیا کے خلاف کھیلے گا۔سری لنکا کے بارے میں جائزہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ میزبان ٹیم سری لنکا کو ورلڈ کپ 2011 کیلئے فیورٹ قرار دیا جارہا ہے۔ 1996 میں ارجنا رانا ٹنگا کی قیادت میں سری لنکن ٹیم نے ہوم گراؤنڈ پر ہونے والے فائنل مقابلے میں آسٹریلیا کو سات وکٹوں سے شکست دے کر اب تک کا اپنا پہلا اور واحد ورلڈ کپ جیتا تھا۔اس بار بھی متوازن ٹیم سلیکشن اور ہوم گراؤنڈ ہونے کے باعث سری لنکنز کو ایونٹ کی بہترین ٹیموں میں سے ایک قرار دیا جارہا ہے۔اس بار ٹیم کی قیادت کمار سنگا کارا کے ہاتھوں میں ہے جنہیں کئی کرکٹ تجزیہ کار راناٹنگا جیسی کرشماتی صلاحیتوں کا حامل کپتان قرار دیتے ہیں۔ورلڈ کپ 2011 کیلئے اعلان کی گئی سری لنکن ٹیم میں 1996 کا ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم کے ایک کھلاڑی موتیا مرلی دھرن بھی شامل ہیں جو ٹیسٹ اور ون ڈے میچوں میں سب سے زیادہ وکٹیں حاصل کرنے والے کھلاڑی ہیں۔ بیٹنگ سائیڈ پر سری لنکنز کپتان سنگاکارا اور ان کے نائب مہیلا جیا وردھنے پر تکیہ کریں گے اور ان تین کھلاڑیوں کی کارکردگی ہی اس بات کا تعین کرے گی کہ آیا ٹائیگرز 1996 کی تاریخ دہرا پائیں گے یا نہیں۔سری لنکا ورلڈ کپ میں اپنا پہلا میچ 20 فروری کو ہمبنتوتا کے ہوم گراؤنڈ پر کینیڈا کے خلاف کھیلے گا۔اس گروپ میں شامل نیوزی لینڈ کے حوالے سے کہا گیاہے کہ بنگلہ دیش، بھارت اور پاکستان کے ہاتھوں اپنی گزشتہ تینوں سیریز میں شکست کھانے والی نیوزی لینڈ کی ٹیم ورلڈ کپ 2011 میں خاصے دباؤ میں نظرآئے گی۔ ٹیم کا مکمل انحصار میچ کا پانسہ پلٹ دینے کی صلاحیت رکھنے والے دو کھلاڑیوں کپتان ڈینیل ویٹوری اور روز ٹیلر پر ہوگا اور عالمی کپ کے ابتدائی میچز میں ان دونوں کی کارکردگی ہی ٹیم کی دوسرے راؤنڈ تک رسائی حاصل کرنے کے امکانات کا تعین کرے گی۔ برینڈن مک کیلم کرکٹ ورلڈ کپ کیلئے کیویز کا ایک اہم ہتھیار ثابت ہوسکتے ہیں تاہم گزشتہ کئی میچز کے دوران ان کی غیر مستقل مزاجی کا مظہر کارکردگی نیوزی لینڈ کی ٹیم کو ان پر زیادہ انحصار کرنے سے روکے ہوئے ہے۔ نیوزی لینڈ 1975، 1979، 1992، 1999 اور 2007 کے کرکٹ ورلڈ کپ کے سیمی فائنلز تک رسائی حاصل کرنے کے باوجود اب تک ایک بار بھی کرکٹ کی دنیا کے اس سب سے بڑے اعزاز کو حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکی ہے اور اپنا آخری ون ڈے ایونٹ کھیلنے والے کپتان ڈینیل ویٹوری اس بار یہ اعزاز اپنی ٹیم کے نام کرنے کیلئے سرتوڑ کوششیں کریں گے۔ نیوزی لینڈ اپنا پہلا میچ کینیا کے خلاف 20 فروری کو بھارتی شہر چنائے میں کھیلے گا۔ایک اور ٹیم زمبابوے کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ زمبابوے کرکٹ ورلڈ کپ میں اپ سیٹ کرنے والی ٹیم کے طور پر مشہور ہے۔ یہ ٹیم ماضی میں 1983 میں آسٹریلیا، 1992 میں انگلینڈ، اور 1999 میں بھارت اور جنوبی افریقہ جیسی اس وقت کی فیورٹ ٹیموں کو ہرا کر اپ سیٹ کرنے کا ریکارڈ رکھتی ہے۔2007 کے آئی سی سی کے ٹوئنٹی 20 ایونٹ میں زمبابوے نے آسٹریلیا کو ہرا کر ایک بڑا اپ سیٹ کیا تھا۔ کرکٹ ورلڈ کپ 2011 کیلئے اعلان کردہ زمبابوے کی ٹیم میں 2007 کے ٹوئنٹی 20 اسکواڈ کے بھی کچھ کھلاڑی شامل ہیں۔اس کا مطلب ہے کہ زمبابوینز اس بار بھی کچھ بڑے اپ سیٹ کرنے کی پوزیشن میں ہیں اور ان کی جانب سے بہتر کارکردگی اگر انہیں اگلے راؤنڈ میں نہ بھی پہنچا پائی تو وہ کسی فیورٹ ٹیم کو ایونٹ سے باہر کا راستہ دکھا سکتے ہیں۔بیٹنگ سائیڈ پر ٹاٹنڈا ٹائبو اور چارلس کووینٹری جبکہ رے پرائس جیسے بالرز کی موجودگی میں یہ ٹیم بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کی پوزیشن میں ہے۔ زمبابوے اپنا پہلا گروپ میچ 21 فروری کو آسٹریلیا کے خلاف بھارتی شہر احمد آباد میں کھیلے گا۔گروپ اے میں کینیڈ اکی ٹیم کے بارے میں جائزہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کینیڈا نے 2009 میں جنوبی افریقہ میں منعقد ہونے والے کوالیفائنگ راؤنڈ میں آئر لینڈ کو شکست دے کر ورلڈ کپ 2011 میں اپنی جگہ یقینی بنائی ہے۔ورلڈ کپ کے دوران ٹیم کا زیادہ تر انحصار برِ صغیر سے تعلق رکھنے والے ہندوستانی و پاکستانی نڑاد کھلاڑیوں پر ہوگا جن میں رضوان چیمہ، عمر بھٹی، وکٹ کیپر اشیش بگائی اور آل راؤنڈر سنیل دھنی رام شامل ہیں۔کینیڈا ایونٹ کا پہلا میچ 20 فروری کو ہمبنتوتا میں میزبان سری لنکا کے خلاف کھیلے گا۔ کینیا نے سری لنکا، بنگلہ دیش ، زمبابوے اور نیوزی لینڈ جیسی ٹیموں کو شکست دے کر 2003 کے کرکٹ ورلڈ کپ کے سیمی فائنل تک رسائی حاصل کرکے دنیائے کرکٹ کو حیران کردیا تھا۔ اسٹیو ٹکولو جیسے تجربہ کار کھلاڑی اور ایلکس اوبانڈا اور کولنز اوبویا جیسے بلے بازوں کی موجودگی کے باعث اس ٹیم کو اب بھی ایونٹ میں کچھ اپ سیٹ کرنے کی صلاحیت کا حامل قرار دیا جارہا ہے۔ چائے کی پیداوار کیلئے مشہور افریقی ملک کی ٹیم ورلڈ کپ کا اپنا پہلا میچ 20 فروری کو بھارتی شہر چنائے میں نیوزی لینڈ کے خلاف کھیلے گی۔

Tags:

بھارت میں سٹے بازی کو قانونی حیثیت دی جائے ، چیف ایگزیکٹو آئی سی سی

February 8th, 2011 · No Comments · سپورٹس

ابوظہبی ‘ بین الاقوامی کرکٹ کونسل کے چیف ایگزیکٹو ہارون لورگاٹ نے بھارت میں سٹے بازی کو قانونی حیثیت دینے کی حمایت کردی، البتہ انہوں نے امید ظاہر کی کہ برصغیر میں ہونے والاورلڈ کپ کرپشن سے پاک ہوگا۔انہوں نے کہا کہ کرپشن سے متعلق قوانین میں تبدیلی پر غور کیا جائے گا۔اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل کے متعلق حالیہ فیصلے سے کھیل کو کرپشن سے پاک کرنے میں بہت مدد ملے گی ۔ واضح رہے کہ بھارت میں جوئے کو قانونی حیثیت حاصل نہیں ہے، سٹے بازوں کا حکومت سے دیرینہ مطالبہ ہے کہ کھیلوں میں سٹے بازی کو قانونی قرار دیا جائے۔ یہ رپورٹس بھی آئی ہیں کہ دنیا بھر میں ہونے والی غیر قانونی سٹے بازی کا گڑھ ممبئی کو سمجھا جاتا ہے۔ ہارون لورگاٹ کا کہنا ہے کہ سٹے بازی کو قانونی قرار دینا کھیلوں کے لیے زیادہ بہتر ہے۔ہارون لورگاٹ نے کہاکہ آئی سی سی میں وہ اور ان کے دیگر ساتھی بھارت میں کھیلوں پر جوئے کو قانونی حیثیت دینے کے بارے میں غور کر رہے ہیں جس کے بارے میں بھارتی حکومت کو تجاویز بھجوائی جارہی ہیں اور ہم ایسی کسی بھی قانون سازی کی مکمل حمایت کریں گے۔ انہوں امید ظاہر کی کہ ورلڈ کپ میں کھلاڑی شفاف کرکٹ کھیلیں گے۔ بھارتی اخبار کی رپورٹ کے مطابق پاکستان اور بھارت کے درمیان میچ میں 20ملین ڈالرز سے زائد کا غیر قانونی جوا کھیلا جاتا ہے۔

Tags:

میچ فکسنگ کا انکشاف ‘ 1946 ء کے بعد جاپان میں سوموٹورنامنٹ کی پہلی با رمنسوخی کا اعلان کردیا گیا

February 6th, 2011 · No Comments · دنیا کی خبریں, سپورٹس

ٹوکیو‘ جاپان میں کشتی کی قدیم صنف سومو کیموسم بہار کے ٹورنامنٹ کوعہدے داروں نے میچ فکسنگ کے اسکینڈل کے انکشاف کے بعد منسوخ کردیا ہے۔ جاپان کے ایک خبررساں ادارے کی خبروں میں کہا گیا ہے کہ مارچ کے آخری دو ہفتوں کے دوران ہونے والے مقابلے منسوخ کردیے گئے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق سومو ٹورنامنٹ کی یہ منسوخی دوسری جنگ عظیم کے بعد 1946ء میں اس کھیل کے مرکزی اسٹیڈیم کی تزین نو کے بعد پہلی بار ہوئی ہے۔ جاپان کی پولیس پکڑے گئے موبائل فونوں کے ٹیکسٹ میسیجز پرتحقیقات کررہی ہے جو یہ ظاہر کرتے ہیں کہ کم ازکم 13 پہلوان بڑے پیمانے پر میچوں کی فکسنگ میں ملوث تھے۔ دو پہلوانوں اور ایک کوچ نے فکسنگ کا اقرار کرلیا ہے۔ ٹیکسٹ میسیجز کے ایک سلسلے میں ایک پہلوان نے ، اس پہلوان سے جس سے اگلے روز اس کا مقابلہ ہونا تھا، کہاتھا کہ وہ اس کے چہرے سے ذرا ہٹ کر زور سے مارے گا اورپھر اسی زور میں آگے جائے گا۔ دوسرے پہلوان نے اپنے ٹیکسٹ جواب میں لکھا تھا کہ میں سمجھ گیا ہوں اور میں کسی حدتک مزاحمت دکھاؤں گا۔ اس اسکینڈل نے کشتی کے مقابلوں سے لطف اندوز ہونے والیبہت سے جاپانیوں کو برہم کردیا ہے ۔ کشتی کی اس قدیم صنف کی تاریخ 1500 سوسال پرانی ہے اور اس کی جڑیں جاپان کے شنتومذہب کی روایات سے جڑی ہوئی ہیں۔

Tags:

قومی کرکٹرز پر پابندی ‘ امریکہ میں پاکستانیوں نے پابندی کو عالمی عدالت انصاف میں چیلنج کرنیکا اعلان کردیا

February 6th, 2011 · No Comments · دنیا کی خبریں, سپورٹس, پاکستان

بوسٹن‘ آئی سی سی کی جانب سے پاکستانی کھلاڑیوں سلمان بٹ ،عامر اور آصف پر پابندی کے خلاف امریکہ میں مقیم پاکستانیوں کے ایک گروپ نے عالمی عدالت انصاف سے رجوع کرنے کا فیصلہ کرلیا۔امریکا کے شہر بوسٹن میں مقیم ڈاکٹر کاشف نے اس سلسلے میں ایک مشہور امریکی لا فرم سے رابطہ کرلیا ہے۔مقدمے کی فیس کی مدد میں تقریبا آٹھ کروڑ پاکستانی روپے صرف ہوں گے۔ڈاکٹر کاشف انصاری کا موقف ہے کہ تینوں پاکستانی کرکٹرز کے خلاف اسپاٹ فکسنگ کیس میں پی سی بی نے کوئی کردار ادا نہیں کیا۔آئی سی سی اس کیس میں ایک فریق بن کر سامنے آئی ہے اور پاکستانی کھلاڑیوں کی زندگیاں تباہ کرنے کی کوشش کی گئی۔ڈاکٹر کاشف نے کہا کہ انہیں امید ہے عالمی عدالت انصاف سے انصاف ضرور ملے گا ۔

Tags:

نیوزی لینڈ نے پاکستان کو چھٹے ون ڈے میچ میں57 رنز سے ہرا دیا

February 5th, 2011 · No Comments · سپورٹس

آکلینڈ ‘ نیوزی لینڈنے چھٹے اور آخری ایک روزہ میچ میں پاکستان کو ستاون رنز سے شکست دے دی ہے۔ چھ ون ڈے میچوں کی سیریز پاکستان نے تین دو سے جیت لی۔آکلینڈ کے اسٹیڈیم ایڈن پارک میں کھیلے جانے والے چھٹے ون ڈے میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا۔ نیوزی لینڈ نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ پچاس اوورز میں سات وکٹوں کے نقصان پر تین سو گیارہ رنز بنائے۔ جیسی رائیڈر نے ایک سو سات رنز کی شاندار اننگز کھیلی۔اسٹائرس نے اٹھاون جبکہ نیتھن میکللم نے پینسٹھ رنز بنائے۔ پاکستان کی جانب سے عبدالرزاق نے دو وکٹیں حاصل کیں۔نیوزی لینڈ کے تین سو بارہ رنز کے ہدف کے تعاقب میں پاکستانی ٹیم مقررہ پچاس اوورز سے قبل ہی دوسو چوون رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی۔ واضح رہے کہ پاکستان نے نیوزی لینڈ کے درمیان دوسرا ون ڈے بارش کے باعث منسوخ کردیا گیا تھا۔ چھٹے میچ میں وکٹ کیپر کامران اکمل اور کپتان شاہد آفریدی کے کوئی بھی کھلاڑی کیوی بالرز کا جم کر مقابلہ نہ کرسکا، کامران اکمل 89 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے، کپتان شاہد آفریدی نے 35 گیندوں پر 44 رنز کی دھواں دار اننگز کھیلی، ہیمش بینٹ نے 4، جیمز فرینکلن نے3 کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا، پاکستان نے سیریز میں دو کے مقابلے میں 3 میچز سے کامیابی حاصل کرلی۔ جیسی رائیڈر کو مین آف دی میچ قرار دیا گیا۔

Tags:

سپاٹ فکسنگ کیس:3 پاکستانی کرکٹر پر فرد جرم عائد کر دی گئی

February 4th, 2011 · No Comments · سپورٹس

اسلام آباد‘ برطانوی پراسیکیوٹرز نے جمعہ کو تین پاکستانی کھلاڑیوں کے خلاف گزشتہ سال انگلینڈ میں لارڈز ٹیسٹ کے دوران سپاٹ فکسنگ کے لیے رشوت لینے کے الزام میں فردِ جرم عائد کر دی ہے۔ برطانیہ کی کراؤن پراسیکیوشن سروس (سی پی ایس) کے مطابق تینوں کھلاڑی سابق کپتان سلمان بٹ اور دو تیز بولر محمد آصف اور محمد عامر اور ایک سپورٹس ایجنٹ مظہر مجید کے خلاف کرپشن اور دھوکہ دہی کی سازش کا الزام ہے۔ سی پی ایس کے کرائم ڈویڑن کے سربراہ سائمن کلیمنٹس کے مطابق یہ فردِ جرم ان الزامات کے بعد لگائی جا رہی ہے کہ مظہر مجید نے کسی تیسری پارٹی سے پیسے لے کر 26 اور 27 اگست 2010 کو لارڈز ٹیسٹ کے دوران ان کھلاڑیوں کو پہلے سے طے شدہ وقت پر نو بالز کروانے کے لیے کہا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ’ہم اس بات پر مطمئن ہیں کہ سزا کے حقیقی امکانات کے لیے کافی شواہد موجود ہیں اور مقدمہ چلانا عوام کے مفاد میں ہے۔‘ پاکستان کے تینوں کھلاڑیوں کے خلاف سپاٹ فکسنگ کے مقدمے کی سماعت کرنے والا ٹربیونل پانچ فروری یعنی کل اپنا فیصلہ سنانے والا ہے۔ جنوری کے شروع میں ٹربیونل نے اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔دوحہ میں ذرائع ابلاغ کو بریفنگ دیتے ہوئے ٹربیونل کے سربراہ مائیکل بیلوف نے بتایا تھا کہ فیصلہ پانچ فروری کو دوبارہ سماعت پر سنایا جائے گا اور اس وقت تک تینوں کھلاڑی معطل رہیں گے۔محمد عامر کے وکیل نے بھی ٹریبونل سے درخواست کی تھی کہ وہ فیصلہ کرنے میں جلدی نہ کرے اور تمام شواہد کا بغور جائزہ لینے کے بعد ہی اس مقدمے کا فیصلہ کیا جائے۔برطانوی وکیل مائیکل بیلوف کی سربراہی میں انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے تین رکنی ٹریبونل نے چھ جنوری سے گیارہ جنوری تک قطر کے دارالحکومت دوحا میں تینوں کھلاڑیوں کے خلاف سپاٹ فکسنگ کے الزامات کی سماعت کی۔گزشتہ سال اگست کو انگلینڈ کے اخبار نیوز آف دی ورلڈ نے دعوٰی کیا تھا کہ مظہر مجید نامی ایک ایجنٹ نے اس کے ایک نمائندے سے ڈیڑھ لاکھ برطانوی پونڈ اس لیے وصول کیے کہ انگلینڈ کے خلاف لارڈز ٹیسٹ میں دو پاکستانی فاسٹ بولر محمد آصف اور محمد عامر طے شدہ موقع پر نو بال کروائیں گے اور اخبار کے مطابق یہ کام کپتان سلمان بٹ کی مرضی سے ہوا۔ان خبروں کے سامنے آنے کے بعد مظہر مجید کو سکاٹ لینڈ یارڈ نے حراست میں لیا تاہم انہیں جلد ہی رہا کر دیا گیا۔ آئی سی سی نے پاکستان کے تین کھلاڑیوں پر کرکٹ کونسل کے آرٹیکل دو کی کئی دفعات کی خلاف ورزی کا الزام لگاتے ہوئے انہیں عارضی طور پر معطل کر دیا تھا۔ تینوں پاکستانی کھلاڑیوں سے شمالی لندن کے تھانے میں کرکٹ میں جوئے کے حوالے سے پوچھ گچھ بھی کی گئی۔

Tags:

کرکٹ ورلڈکپ ‘ شاہد آفریدی کو کرکٹ ٹیم کا کپتان نامزد کر دیا گیا

February 4th, 2011 · No Comments · سپورٹس, پاکستان

ورلڈکپ کی تاریخ میں شاہد آفریدی پہلی مرتبہ قومی ٹیم کی قیادت کریں گے
اسلام آباد‘ پاکستان کرکٹ بورڈ نے ورلڈ کپ دوہزارگیارہ کے لئے شاہد آفریدی کوقومی ٹیم کا کپتان برقراررکھا ہے۔ یکم مارچ انیس سواسی کوقبائلی علاقے خیبرایجنسی میں پیدا ہونے والے شاہدآفریدی دنیائے کرکٹ میں اپنے جارحانہ اندازکیلئے مشہورہیں اوران کا شمارکرکٹ کی دنیا کے مشہورآل راو?نڈرزمیں ہوتا ہے۔دوہزارگیارہ کا عالمی کپ شاہد آفریدی کے کیرئیرکا چوتھا ورلڈ کپ ہے۔ دائیں ہاتھ سے بیٹنگ اورلیگ بریک بالنگ کرنے والے شاہد آفریدی نے ایک روزہ کیرئیرکا آغازدواکتوبرانیس سوچھیانوے کوکینیا کے خلاف نیروبی میں کیا۔ انہوں نے اپنے کیرئیرکے دوسرے ہی ون ڈے میں صرف سینتیس گیندوں پرون ڈے کرکٹ کی تیزترین سنچری بنانے کا ریکارڈ قائم کیا جوآج تک برقرارہے۔ ون ڈے میچزمیں سب سیزیادہ چھکے لگانے کا عالمی ریکارڈ بھی شاہد آفریدی کے پاس ہے۔شاہد آفریدی تین سوگیارہ ون ڈے میچوں میں تئیس اعشاریہ آٹھ چھ کی اوسط سے چھ ہزارپانچ سوانتالیس رنزاسکورکرچکے ہیں جن میں چھ سنچریاں اوراکتیس نصف سنچریاں بھی شامل ہیں۔ شاہد آفریدی نے پینتیس اعشاریہ دوچارکی اوسط سے دوسو بانوے وکٹیں بھی حاصل کررکھی ہیں۔ ون ڈے میں کرکٹ میں ان کی بہترین بالنگ اڑتیس رنزکے عوض چھ وکٹیں ہیں۔ شاہد آفریدی ون ڈے کرکٹ میں تین مرتبہ پانچ وکٹیں حاصل کرچکے ہیں۔ شاہد آفریدی بیس میچوں میں ٹیم کی قیادت کرچکے ہیں۔ پاکستان نے ان کی قیادت میں نومیچزمیں کامیابی حاصل کی، دس میں اسے شکست ہوئی جبکہ ایک میچ بے نتیجہ رہا۔ شاہد آفریدی پہلی مرتبہ ورلڈ کپ میں ٹیم کی قیادت کریں گے

Tags:

بھارت ورلڈکپ جیت سکتا ہے ۔ وسیم اکرم

February 4th, 2011 · No Comments · سپورٹس

ممبئی ‘ بھارت ورلڈکپ کا فیوریٹ قرار دینے والوں میں پاکستان کے سابق کپتان وسیم اکرم بھی ہیں ۔ عالمی کپ جیتنے کے لیے بھارت کی حمایت کرتے ہوئے وسیم اکرم نے کہا ہے کہ ’’ میں کافی وقت سے کہہ رہا ہوں کہ ٹیم انڈیا نے حال میں جس طرح گھریلو میدانوں میں کارکردگی دکھائی ہے اس کی بنیاد پر وہ ٹورنامنٹ کی مضبوط دعویدار ہے لیکن ٹورنامنٹ میں کھلاڑیوں کی فٹنس کافی اہم ہوگی اور اسی کی بنیاد پر ان کی آزمائش بھی ہو گی ۔ ممبئی میں منعقدہ ا یک پروفیشنل ایونٹ میں وسیم اکرم نے کہا کہ ’’ عالمی کپ میں گھریلو پچوں پر کھلینے کا دباؤ کافی الگ ہوتا ہے میں نے اپنے ملک میں عالمی کپ کھیلا ہے اور سچن ٹنڈولکر بھی اس تجربے سے گزر چکے ہیں گھریلو میدانوں پر کھیلنے کا جو دباؤ ہوتا ہے اسے برداشت کرنا کافی مشکل ہوتا ہے لیکن بھارت کی موجودہ ٹیم نے دباؤ میں کھیلنا سیکھ لیا ہے ایک روزہ سیریز میں انگلینڈ کو سکست دے کر آسٹریلیا بھی ورلڈکپ کا مضبوط دعویدار بن گیا ہے اس کے علاوہ سری لنکا اور جنوبی افریقہ کو مقابلے سے باہر سمجھنا مناسب نہیں ہوگا۔ ‘‘ برصغیر کی پچوں کو تیز گیند بازوں کے لیے مشکل قرار دیتے ہوئے اکرم نے کہا ’’ تیز بالروں کے لیے یہ ٹورنامنٹ بہت مشکل ہو گا۔ اس کے علاوہ ایک روزہ کرکٹ میں اخری بیٹنگ پاور پلے کی وجہ سے گیند بازوں کی مشکلیں اور بڑھ گئی ہیں اس کی وجہ سے بلے باز نئی تکنیک سیکھ گئے ہیں اور گیند بازوں کے لیے کہیں کوئی متبادل بچا نہیں ہے ۔ گیند بازوں کو میں صرف یہ مشورہ دینا چاہوں گا کہ وہ آف اسٹیمپ کے باہر یا رکر پھینکیں تاکہ بلے باز کا تھرڈ مین کی طرف کھیلنے کا امکان رہے ۔ عالمی کپ کی خطرناک ٹیموں میں سے پاکستان ایک ہے ۔ وسیم اکرم نے مزید کہا کہ ورلڈکپ میں پاکستان کے کپتان کے لیے میں یقینی طور پر شاہد آفریدی کی حمایت کروں گا کیونکہ وہ بہت تجربہکار ہیں اور ان کی قیادت ٹیم نے نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز بھی جیتی ہے ۔ عالمی کپ بہت قریب ہے اور ایسے میں ٹیم کا کپتان تبدیل کرنا مناسب نہیں ہے ۔ یوسف پٹھان اور مہندر سنگھ دھونی کے اس بیان پر کہ ٹیم سچن ٹنڈولکر کے لیے ورلڈکپ جیتنا چاہتی ہے وسیم اکرم کا کہنا ہے کہ میراخیال ہے کہ بھارتی ٹیم سچن ٹنڈولکر کے لیے ورلڈکپ جیتنے کے مقصد سے کھیل رہی ہے اس سے ٹیم کو ترغیب ملے گی اور ٹیم کی کامیابی کے امکانات بڑھیں گے۔

Tags:

جاپان میں سومو پہلوانوں نے میچ فکسنگ کے الزامات کو تسلیم کر لیا

February 4th, 2011 · No Comments · سپورٹس

ٹوکیو ‘ 3 سومو پہلوانوں نے مقابلوں کے فکسڈ ہونے کو تسلیم کر لیا ہے ۔ جاپان کے وزیر سپورٹس نے پارلیمنٹ میں خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ ان کا کہنا ہے کہ اس واقعہ سے روایتی سپورٹس کو دھچکا لگا ہے ۔ جاپان کے وزیر تعلیم و سپورٹس یوشیا کی ٹکا کی جو سومو انڈسٹری کی دیکھ بھال کرتے ہیں ، نے کہا کہ جاپان سومو ایسوسی ایشن کے سربراہ نے ان کی وزارت کو مطلع کیا تھا کہ تین پہلوانوں نے فکسنگ کے نتائج کا انکشاف کیا ہے ۔ ان دعوؤں کے فووری بعد سومو ایسوسی ایشن کے چیئرمین نے معذرت خواہی کی تھی جس کی اطلاع میڈیا میں شائع ہوئی ۔ بتایا جاتا ہے کہ سیل فونز کے ذریعہ اس بات کا افشاء ہوا ہے کہ کشتی میں فکسنگ ہوئی تھی ۔

Tags: